The news is by your side.

Advertisement

امریکا کی ری پبلیکن پارٹی کا ترکی پر پابندیاں‌ عائد کرنے کا مطالبہ

واشنگٹن : ریپبلکن ارکان نے کہا ہے کہ ترک صدراور ان کی حکومت کو شمالی شام میں ہمارے کرد اتحادیوں پر بے رحمانہ حملے کی وجہ سے سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔

تفصیلات کے مطابق امریکی ایوان نمائندگان میں درجنوں ری پبلیکنز ارکان نے اعلان کیا کہ وہ شام میں کرد فورسز کے خلاف ترکی کے فوجی حملے کے جواب میں ترکی پر پابندیاں عائد کرنے کے لیے ایک قرار داد پیش کریں گے۔

ریپبلکن ریپ لز چینی نے ایک بیان میں کہا کہ صدر رجب طیب اردوآن اور ان کی حکومت کو شمالی شام میں ہمارے کرد اتحادیوں پر بے رحمانہ حملے کی وجہ سے سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر کہا کہ ہم داعش کو 100 فی صد شکست دینے میں کامیاب رہے ہیں اب شام میں ترکی کے زیر اثر علاقے میں ہمارا کوئی فوجی نہیں ہے، ہم نے اپنا کام بالکل ٹھیک طریقے سے انجام دیا ہے اب ترکی کردوں پر حملہ کر رہا ہے جو 200 سال سے ایک دوسرے سے لڑ رہے ہیں۔

ٹرمپ نے کہا کہ ہمارے پاس تین میں سے ایک آپشن ہے ہزاروں فوج بھیجنا یا ترکی کو معاشی طور پر تباہ کرنا اور اس پر پابندیا ں عائد کرنا یا ترکی اور کردوں کے مابین ثالثی کرنا۔

خیال رہے کہ امریکی صدر کی طرف سے چوبیس گھنٹوں میں ترکی کویہ دوسری وارننگ ہے۔

انہوں نے ایک روز قبل ایک بیان میں انقرہ کو دھمکی دی تھی کہ اگر اس نے شام میں فوجی کارروائی میں حدود سے تجاوز کیا تو ترکی معیشت تباہ کردی جائے گی۔

ٹرمپ نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ ترکی طویل عرصے سے کردوں پر حملہ کرنے کا منصوبہ بنا رہا تھا مگر ان کی جنگ نئی نہیں ہےوہ ایک طویل عرصے سے لڑ رہے ہیں۔

ٹرمپ نے کہا کہ ترک حملے کے علاقے کے قریب ہمارا کوئی فوجی نہیں ہے،انہوں نے کہا کہ میں لامتناہی جنگوں کو ختم کرنے کی کوشش کر رہا ہوں،امریکی صدر نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ وہ فریقین سے بات کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں