site
stats
عالمی خبریں

امریکی ہٹ دھرمی برقرار، بیت المقدس پر قرارداد ویٹو

Security Council US

نیویارک: امریکا نے ایک بار پھر روایتی ہٹ دھرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل میں ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے خلاف قرارداد کو ویٹو کر دیا ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق مصر کی جانب سے پیش کردہ اس قرارداد کے حق میں چودہ ممالک نے ووٹ ڈالے تھے۔ امریکی سفیر نے اسے ویٹو کرتے ہوئے اسے امریکا کی تذلیل کی کوشش قرار دیا۔

یاد رہے کہ بین الاقوامی اتفاق رائے کو نظرانداز کرتے ہوئے امریکی صدر نے دسمبر کے اوائل میں یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرتے ہوئے امریکی سفارت خانہ تل ابیب سے یروشلم منتقل کرنے کا اعلان کیا تھا، جس پر شدید عالمی ردعمل سامنے آیا۔

تجزیہ کاروں کے مطابق اب فلسطین اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کرے گا۔

یاد رہے کہ سلامتی کونسل میں ارکان کی تعداد 15 ہوتی ہے، جن میں پانچ ارکان مستقل ہوتے ہیں۔ مستقل اراکین کو کسی بھی فیصلے کے خلاف ویٹو کا اختیار حاصل ہے، البتہ جنرل اسمبلی میں ویٹو نہیں کیا جاتا۔

یہ بھی پڑھیں: یورپی یونین نے یروشلم کے معاملے میں‌ ٹرمپ کی مخالفت کر دی

تفصیلات کے مطابق امریکا کے نائب صدر مائیک پینس بدھ کو یروشلم کا دورہ کریں گے۔ فلسطینی صدر محمود عباس نے یروشلم کو تسلیم کرنے کے اعلان پر احتجاجاً امریکی نائب صدر سے ملاقات منسوخ کردی ہے۔ اس کے بجائے اب وہ سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان اور شہزادے محمد بن سلمان سے ملاقات کریں گے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top