The news is by your side.

سعودی عرب: گاڑیوں کی انشورنس فیس میں اضافہ

ریاض: سعودی عرب میں گاڑیوں کی سالانہ انشورنس پریمیئم (فیس) میں اضافہ کیا گیا ہے جس سے گاڑیوں کے مالکان تشویش میں مبتلا ہیں۔

اردو نیوز کے مطابق سعودی عرب میں گاڑیوں کی سالانہ انشورنس پریمیئم (فیس) میں اضافے نے نئی بحث چھیڑ دی ہے، مالکان کی جانب سے سوال کیا جارہا ہے کہ آخر اضافے کی وجہ کیا ہے۔

انشورنس کے شعبے کے مشیر سلیمان معیوف کا کہنا ہے کہ گاڑیوں کی انشورنس کسی بھی ملک کے تمدنی، اقتصادی اور قومی نظام کا مستحکم حصہ مانا جاتا ہے، انشورنس کمپنیاں 20 برس قبل قائم کی گئیں، ابتدا میں ان کے پیکیج غیر منظم تھے لیکن اب صورت حال یکسر مختلف ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ قانون سازی ہونے کے بعد سعودی سینٹرل بینک (ساما) نے انشورنس پیکج پیش کرنے والی کمپنیوں کو اس کا پابند بنا دیا ہے۔

گزشتہ برسوں کے دوران گاڑیوں کی انشورنس فیس میں مسلسل اضافہ ہوتا رہا ہے، اس کا جواز یہ کہہ کر پیش کیا جاتا رہا کہ بڑے شہروں میں رش بڑھنے کی وجہ سے حادثات بھی بڑھ گئے ہیں۔

گاڑیوں کے مالکان کا شکوہ ہے کہ انشورنس کمپنیاں یکساں سلوک نہیں کر رہیں اس کے لیے درجہ بندی ضروری ہے۔

انشورنس کمپنیوں کے ذرائع نے فیس میں اضافے کے تین بڑے اسباب بتائے ہیں جن کی وجہ سے کم از کم انشورنس فیس 600 تا 700 سے بڑھ کر ایک ہزار ریال کی حد عبور کر گئی ہے۔

پہلا سبب یہ ہے کہ ماضی کے مقابلے میں لاگت بڑھ گئی ہے، دوسرا سبب یہ بتایا جا رہا ہے کہ خود ساختہ ٹریفک حادثات کا سلسلہ چل رہا ہے اور اس حوالے سے دھوکا دہی ہو رہی ہے۔

تیسرے سبب کا تعلق انشورنس کمپنیوں کے اہلکاروں کی غفلت سے ہے۔

ملکت میں انشورنس سیکٹر کے ترجمان عادل العیسیٰ کا کہنا ہے کہ انشورنس پیکج میں اضافے کا سب سے بڑا سبب حادثات کی شرح میں اضافہ اور فاضل پرزوں کے نرخوں کا مہنگا ہونا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تھرڈ پارٹی انشورنس میں اضافہ اس وجہ سے ہوا ہے کیونکہ کمپنیوں کو گزشتہ دنوں بھاری خسارہ ہوا، حادثات کی کثرت اور فاضل پرزوں کے مہنگے ہونے کی وجہ سے صورت حال سنگین ہوگئی ہے۔

دوسری جانب ایک رپورٹ کے مطابق سال رواں کے دوران انشورنس کی قسطوں میں 2.7 ارب ریال کا اضافہ ہوا، سالانہ کے تناسب سے 28.8 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

گاڑیوں کی انشورنس میں 23.7 فیصد اضافہ ہوا یعنی 1.7 ارب ریال سے بڑھ کر 2.1 ارب ریال تک پہنچ گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں