The news is by your side.

اس جزیرے کی انوکھی اور خاص بات کیا ہے؟

دنیا بھر میں یوں تو ہزاروں جزیرے ہوں گے لیکن یورپ میں ایک ایسا جزیرہ بھی ہے جو ہزاروں جزیروں میں منفرد حیثیت رکھتا ہے۔

جی ہاں فیزنٹ آئی لینڈ نامی ایک چھوٹا سا جزیرہ ہے جو فرانس اور اسپین کی سرحد پر واقع ہے اور دونوں کے درمیان ایک قدرتی باڑ کا کام بھی کرتا ہے۔

اب آپ کہیں گے کہ اس میں کیا خاص بات ہے دنیا میں ایسے کئی جزیرے یا علاقے ہوں گے جو دو ممالک کی سرحدوں پر واقع ہوتے ہیں اور ان می سے کئی متنازع بھی ہوں گے تو ہم بتا دیں کہ اس جزیرے کی خاص بات یہ ہے کہ اس پر دو ممالک کی ملکیت کا کوئی تنازع نہیں بلکہ فرانس اور اسپین دونوں ہی اس کے مالک ہیں اور ہر چھ ماہ بعد حق ملکیت دوسرے میں حق میں بدل دیا جاتا ہے۔

اس چھوٹے سے جزیرے کا رقبہ 6820 مربع میٹر ہے اور اس پر کوئی رہتا بھی نہیں ہے کیونکہ جزیرے پر سوائے ہریالی کے کوئی دوسری سہولت موجود نہیں ہے لیکن اس کی تاریخ بہت دلچسپ ہے۔

 

 

تاریخی طور پر یہ جزیرہ اسپین کی ملکیت میں تھا۔ تاہم 17 ویں صدی عیسوی میں فرانس اور اسپین کی 30 سالہ جنگ کے بعد اس جزیرے کی ملکیت کا معاملہ پیش آیا تو دونوں طرف کی حکومتوں اور افواج نے اس کی ملکیت پر مذاکرات شروع کیے۔ گیارہ برس میں کل 24 اجلاس ہوئے اور ایک معاہدہ ہوا کہ یہ جزیرہ دونوں ملکوں کی ملکیت میں شامل رہے گا۔

پھر یوں ہوا کہ محبت درمیان میں آئی جو بڑے بڑے فاتحین اور بادشاہوں کو اپنے آگے سرنگوں کر دیتی ہے۔

یہ محبت فرانس کے بادشاہ لوئی XIV نے اسپین کے بادشاہ فلپ چہارم کی بیٹی ماریہ تھریسا کی شادی سے خوشگوار انجام پذیر ہوئی۔ شادی کی یاد میں اس جزیرے پر ایک یادگار تعمیر کی گئی اور اسے امن کی علامت قرار دیا گیا اور اس کے بعد یہ تاریخی فیصلہ ہوا کہ جزیرہ 6 ماہ فرانس اور 6 ماہ اسپین کی ملکیت رہے گا۔ دونوں ممالک کی بحریہ یہاں کی نگرانی بھی کرتی ہے۔

اس تاریخی اور منفرد خصوصیت کے حامل جزیرے پر عام شائقین صرف خاص مواقع پر ہی یہاں آسکتے ہیں۔ سال کے وسط کی تقریب سب سے اہم ہے جس میں فرانس اور اسپین دونوں ممالک کے سیاح شریک ہوتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں