The news is by your side.

Advertisement

ویکسین کی آمیزش: عالمی ادارہ صحت کا انتباہ ‏

عالمی ادارہ صحت نے مختلف کورونا ویکسین کے ملانے اور آمیزش کے بڑھتے رجحان کو انتہائی ‏خطرناک قرار دے دیا۔

ڈبلیو ایچ او کی چیف سائنسدان ڈاکٹر سومیا سوامی ناتھن نے کہا ہے کہ لوگوں میں بڑھتے ہوئے ‏مختلف اقسام کی کورونا ویکسین کے ملاپ کے رجحانات صحت کے لیے انتہائی خطرناک ثابت ہو ‏سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ محدود ڈیٹا کی بنیاد پر مختلف اقسام کی ویکسین کی آمیزش کے نتائج طبی ‏لحاظ سے مضرصحت ہو سکتے ہیں۔

World Health Organization (WHO) Chief Scientist Soumya Swaminathan attends a press conference organised by the Geneva Association of United Nations Correspondents (ACANU) amid the COVID-19 outbreak, caused by the novel coronavirus, at the WHO headquarters in Geneva Switzerland July 3, 2020. Fabrice Coffrini/Pool via REUTERS

آن لائن بریفنگ میں ڈاکٹر سومیا سوامی ناتھن نے لوگوں میں الگ الگ دواساز کمپنیوں کی ویکسین ‏کو ملانے کا رجحان بغیر کسی ٹھوس شواہد اور کم تجرباتی ڈیٹا کی بنیاد پر پروان چڑھ رہا ہے یہ ‏ممالک میں انتشار کی صورتحال کو جنم دے سکتا ہے کہ شہری اپنے طور پر فیصلہ کرنے لگ ‏جائیں کہ کون دوسری، تیسری اور چوتھی اور کس قسم کی خوراک لے گا۔

عالمی ادارہ صحت کی جانب سے یہ بیان ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب مختلف ممالک کی ‏جانب سے یہ بات سامنے آئی تھی کہ دو مختلف قسم کی کورونا ویکسین کی الگ الگ خوراکیں ‏لی جا سکتی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں