The news is by your side.

Advertisement

ڈبلیو ایچ او نے نئی وبا کے پھیلاؤ میں تیزی کا خدشہ ظاہر کر دیا

جنیوا: عالمی ادارۂ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے نئی وبا منکی پاکس کے پھیلاؤ میں تیزی کا خدشہ ظاہر کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے کہا ہے کہ مختلف ممالک میں منکی پاکس کے مزید کیسز سامنے آ سکتے ہیں، اس خدشے کے پیش نظر ان ممالک کی نگرانی بھی بڑھا دی گئی ہے، جہاں ابھی تک یہ بیماری رپورٹ نہیں ہوئی۔

روئٹرز کے مطابق ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ ہفتے کو 12 رکن ممالک سے منکی پاکس کے 92 مصدقہ اور 28 مشتبہ کیسز سامنے آئے ہیں جہاں یہ وائرس پہلے سے موجود نہیں تھا۔

ڈبلیو ایچ او نے مزید کہا کہ وہ آئندہ دنوں میں منکی پاکس کے پھیلاؤ سے روکنے سے متعلق رہنمائی اور مشورے بھی فراہم کریں گے، دستیاب معلومات کے مطابق یہ وائرس انسانوں سے دوسرے انسانوں کو قریبی جسمانی رابطے کے باعث لاحق ہو رہا ہے۔

نئی وبا کے حوالے سے سعودی وزارت صحت کا اہم بیان

ماہرین کا کہنا ہے کہ تاریخ میں پہلی بار یہ وائرس افریقی ممالک سے نکل کر دنیا بھر میں پھیلنے لگا ہے اور اس کی تشخیص ایسے افراد میں بھی ہو رہی ہے جو کبھی افریقی ممالک گئے ہی نہیں۔

واضح رہے کہ منکی پاکس ایک ایسا وائرس ہے جو جنگلی جانوروں خصوصاً زمین کھودنے والے چوہوں اور بندروں میں پایا جاتا ہے اور اکثر ان سے انسانوں کو بھی لگ جاتا ہے، اس وائرس کے زیادہ تر کیسز ماضی میں افریقہ کے وسطی اور مشرقی ممالک میں پائے جاتے تھے جہاں یہ بہت تیزی سے پھیلتا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں