The news is by your side.

Advertisement

بھارت: ’’یکم فروری کو میرے ہاتھوں درندے مریں گے‘‘

نئی دہلی: بھارت میں نربھیا اجتماعی زیادتی کیس میں ملوث چاروں مجرموں کو یکم فروری کو پھانسی دی جائے گی، جلاد کا کہنا ہے کہ ان کے ہاتھوں درندے مریں گے۔

تفصیلات کے مطابق 54 سالہ بھارتی جلاد کا کہنا ہے کہ اجتماعی زیادتی کرنے والے درندہ اور حیوانی صفت کے مالک ہیں انہیں انسان نہیں کہا جاسکتا، چاروں یکم فروری کو اپنے انجام کو پہنچیں گے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق 18 جنوری کو دہلی کورٹ نے نربھیازیادتی کیس میں ملوث تمام مجرمان کے خلاف ڈیتھ وارنٹ جاری کیے، چاروں کو یکم فروری کی صبح چھ بجے تہاڑ جیل میں پھانسی دی جائے گی۔

مجرموں کو 22 جنوری کی صبح پھانسی دی جانی تھی۔ تاہم اس معاملے کے ایک مجرم مکیش سنگھ نے دہلی کورٹ میں سزائے موت کی تاریخ ملتوی کرنے کی اپیل دائر کی تھی اور رحم کی عرضی بھی صدر رام ناتھ کووند کو بھجوائی تھی جو 18 جنوری کو مسترد ہوئی۔

دہلی ریپ کیس:ملزمان کی اپیل مسترد ‘سزائے موت برقرار

صدر سے رحم کی بھیک مانگنے پر مجرمان کی 22 جنوری کو ہونے والی پھانسی روک دی گئی تھی۔ رحم کی عرضی مسترد ہونے کے بعد دہلی کورٹ نے اٹھارہ جنوری کو چاروں مجرمان کے خلاف حتمی فیصلہ سنایا اور یکم فروری کو پھانسی دینے کا حکم دیا۔

واضح رہے کہ 16 دسمبر 2012 کو بھارتی شہر نئی دہلی میں اجتماعی زیادتی کا واقعہ رونما ہوا تھا، 6 مجرموں نے چلتی بس میں ریپ کرنے کے بعد لڑکی کو سڑک کنارے پھینک دیا تھا، بعد ازاں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے لڑکی ہلاک ہوگئی تھی۔

خیال رہے کہ اس معاملے میں کل چھ افراد تھے جن میں ایک نابالغ تھا اور وہ تین سال کی سزا مکمل کرنے کے بعدرِہا ہوگیا جبکہ ایک دیگر نے مقدمے کے دوران ہی جیل میں پھانسی لگا کر خود کشی کر لی تھی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں