The news is by your side.

Advertisement

واٹس ایپ “خود کشی گروپ” نے لڑکی کی جان لے لی

پورٹس لیڈ : برطانیہ میں 20سالہ لڑکی نے پراسرار طور پر خود کشی کرلی، ذرائع کے مطابق خود کشی کی مبینہ وجہ واٹس ایپ خود کش گروپ ہے۔

بین فیلڈ ویلی میں ایک پراسرار واقعہ پیش آیا جسے دیکھ کر لوگ دنگ رہ گئے، پورٹس لیڈ کرکٹ کلب کے قریب جنگل میں پولیس کو ایک نوجوان لڑکی مردہ حالت میں ملی۔

اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ لڑکی نے دیگر تین افراد کے ساتھ ایک واٹس ایپ خودکش گروپ میں چیٹنگ کی اور خود کشی کے بہترین طریقوں پر گفتگو کرنے کے بعد جنگل میں جاکر خودکشی کرلی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق20سالہ ایمی اسپرنگر ایک واٹس ایپ خودکش گروپ میں باقاعدہ چیٹنگ کیا کرتے تھی، جس کا مقصد خود کشی کے طریقوں سے متعلق گفتگو کرنا تھا۔

ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ مذکورہ واٹس ایپ خود کش گروپ کے دیگر تین ممبران نے بھی خود کشی کرلی ہے، پولیس کی جانب سے آن لائن گفتگو یا دیگر ارکان کے بارے میں مزید تفصیلات فراہم نہیں کی گئیں۔

اس حوالے سے ڈاکٹر کیرن ہینڈرسن نے کہا ہے کہ ایمی کی موت دم گھٹنے کی وجہ سے ہوئی، انہوں نے کہا کہ ایمی اسپرنگر اپنی موت سے قبل آٹزم اور جذباتی طور پر غیر مستحکم شخصیت کی خرابی کی بیماری کے باوجود بہتر کام کر رہی تھی۔

ایمی اسپرنگر سے متعلق سال 2020 میں 15 بار اور2021 میں تین بار لاپتہ ہونے کی اطلاعات ملی ہیں اور اس نے کئی مواقع پر خود کو نقصان بھی پہنچایا تھا۔

ڈاکٹر کیرن ہینڈرسن نے ان کی موت کو ایک المیہ قرار دیا اور کہا کہ ایمی بہت شدید اور زندگی کو محدود کرنے والے صدمے میں مبتلا تھیں جو کہ ان کے بچپن اور چھ سال کی عمر میں ان کے بڑے بھائی ڈیوڈ کی موت سے پیدا ہوئی تھیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں