The news is by your side.

Advertisement

زوزانہ کیپوٹوا سلوواکیا کی پہلی خاتون صدر منتخب

براٹیسلاوا : سلوواکیا کی عوام نے صدارتی انتخابات کے دوران پہلی مرتبہ بدعنوانی کے خلاف آواز اٹھانے والی زوزانہ کیپوٹوا نامی خاتون کو ملک کی سربراہی کے لیے منتخب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق یورپی یونین کی رکن ریاست سلوواکیا میں گزشتہ دنوں صدارتی انتخابات منعقد ہوئے جس میں بڑی تعداد میں عوام اپنے سربراہ مملکت کا انتخاب کرنے اپنے گھروں سے ووٹ ڈالنے نکلے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن آف سلوواکیا نے ہفتے کے روز انتخابات کے نتائج کا اعلان کیا جس میں سلوواکیا کی پہلی خاتون صدر 45 سالہ زوزانہ کیپوٹوا کو سربراہ مملکت منتخب کیا گیا۔

برطانوی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ زوزانہ کیپوٹوا کا تعلق سلوواکیا کی لبرل پروگریسو جماعت ہے، جس نے انہیں صدارتی انتخابات کے لیے نامزد کیا تھا۔

برطانوی میڈیا کا کہنا ہے کہ زوزانہ کیپوٹوا کے حق میں 58 اعشاریہ 3 فیصد ووٹ ڈالے گئے جبکہ ان کے مخالف امیدوار کو تقریباً 41 اعشاریہ 7 فیصد ووٹ ملے جس کے باعث زوزانہ کیپوٹوا صدارتی الیکشن کے میدان میں کامیاب رہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ سلوواکیا کی نو منتخب صدر بطور قانون دان (وکیل) بھی خدمات انجام دے رہی ہیں جس کی خدمات اور ذہانت کا اعتراف کرتے ہوئے ان کی جماعت نے انہیں صدارتی امیدوار نامزد کیا۔

مزید پڑھیں : سہالے زیوڈے ایتھوپیا کی پہلی خاتون صدر منتخب

مزید پڑھیں : جارجیا میں پہلی خاتون صدر منتخب

خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ کیپوٹوا گزشتہ 14 برسوںں سے غیر قانونی زمینوں سے متعلق کیس لڑرہی تھی، نو منتخب صدر نے الیکشن میں صدارتی امید وار سیفکویک کو شکست دی ہے جو یورپین کمیشن کے نائب صدر ہیں۔

مقامی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ سلوواکیا کی پہلی خاتون صدر طلاق یافتہ اور دو بچوں ماں ہیں جوں ہم جنس پرستی اور بچوں کے گود لینے کی حامی ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں