site
stats
اہم ترین

ڈاکٹر طاہر القادری نےعمران خان سے مل کرانقلاب مارچ کرنےکا اعلان کردیا

اسلام آباد: پاکستان عوامی تحریک آج سانحہ ماڈل ٹاؤن اور ضرب ِ عضب میں شہید ہونے والے شہدا کی یاد میں یوم شہدامنارہی ہے جس کی مرکزی تقریب لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں واقع منہاج القرآن سیکریٹیریٹ میں منعقد ہوئی۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان عوامی تحریک کےسربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ ظلم کی انتہا ہوچکی ہے اور اب نہ ظلم رہے گا اور نہ ہی ظالم بچے گا۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے اہنے کارکنان سے تین دن تک ماڈل ٹاؤن میں جمع رہنے کا حکم دیتے ہوئے تاریخ ساز اعلان کیا کہ تین دن تک یہاں شہدا کی قرآن خوانی ہوگی اور چودہ اگست کو انقلاب مارچ روانہ ہوگا جو عمران خان کے آزادی مارچ کے ساتھ مل کر اسلام آباد جائے گا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ساتھ مل کر حکمرانوں کے خلاف جدوجہد کریں گے۔

پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے تقریب کے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آج ضرب ِ عضب کے شہدا ، سانحۂ ماڈل اور ملک بھر میں دہشت گردوں کے ہاتھوں شہید ہونے والے شہدا سے خراج ِ تحسین پیش کرنے کا دن ہے۔

علامہ ڈاکٹر طاہر القادری نے خطاب کے آغاز میں پاکستانی قوم کے چنیدہ مسائل کا ذکر کرتے ہوئے ان کے حل کے لئے اللہ تعالیٰ سے مدد کی دعامانگی۔

انہوں نے جلسے کے شرکاء کے جذبے کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا کہ انقلاب کوئی پھل نہیں جو آسانی سے جھولی میں ڈال دیا جائے ، دنیا بھر میں جہاں کہیں آج ترقی اور آزادی ہے اس کے پیچھے قربانیوں کی طویل اور لازوال قربانیوں کی داستانیں ہیں۔ ظالم ابھی اور ظلم کریں گے لیکن پاکستان عوامی تحریک کی تاریخ ہمیشہ پر امن رہی ہے اور انقلاب کے راستے پرامن سفر کریں گے۔

انہوں نے انکشاف کیا کہ حکومت ان کے قتل کی سازش تیار کر چکی ہے اور عنقریب مجھے شہید کردیا جائے گا، انہوں نے حکمرانوں کو للکارتے ہوئے کہا کہ مجھے شہادت سے ڈر نہیں لگتا ، میں کسی کنٹینر میں نہیں بیٹھا ہوا جس کو مارنا ہے ا بھی آجائے۔ میں اس ملک کے عوام کے فلاح و بہبود کے لئے اور ان کے حقوق کے لئے فخر سے شہید ہوں گا۔

یوم ِ شہدا کی تقریب کے مناظر

یوم ِ شہدا کی تقریب کے مناظر

ان کا کہنا تھا کہ میں پچھلے تیس سال سے ماڈل ٹاؤن کے اس ایک کنال کے مکان میں رہ رہا ہوں حکومت نے مجھ پر منی لانڈرنگ کے الزامات لگائے ، تحقیقات کرائیں اور آخر کار خود شرمندہ ہوئے کہ دنیا بھر میں میرے کوئی اثاثے نہیں ہے۔

انہوں نے اپنے کارکنوں سے کہا کہ انقلاب کی منزلیں بے پناہ سخت ہیں اور جو جانا چاہتا ہے وہ چلا جائے میں کسی پر زبردستی نہیں کروں گا۔ انہوں نے یوم ِ شہدا کی تقریب کے بعد کارکنوں کو مزید تین دن تک بیٹھنے کے لئے کہا جس پر شرکا ء نے انتہائی جوش و خروش سے ان کا ساتھ دینے کا اعلان کیا۔

ڈاکٹرطاہر القادری کا کہنا تھا کہ روز مجھ پر مقدمے قائم کئے جارہے ہیں کبھی اغوا کا ، کبھی کسی ایکسیڈنٹ میں مارے جانے والے کو ہمارے حساب میں ڈال دیا جاتا ہے لیکن آج دو مہینے بعد بھی ہمارے شہدا کے قتل کی ایف آئی آر درج نہیں کی گئی۔

حکمرانوں تحفظ کے نام پر ماڈل ٹاؤن کو غزہ بنادیا ہے سات روز سے شہری یہاں محصور ہیں اور کسی کو ان کی مدد نہیں کرنے دی جارہی یہاں تک کہ ایم کیو ایم کے وزرا کو کھانا لے کر بھی نہیں آنے دیا گیا۔

ڈاکٹر قادری نے کہا کہ ہم پاکستان کی سیاسی سماجی اور ہر سطح پر ہونے والی دہشت گردی کے مخالف ہیں اور ہم اس ملک سے دہشت گردوں سے پاک کر کے دم لیں گے۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے حدیث کے حوالے سے کہا کہ ظالم حکومت کے خلاف ڈٹ جانا سب سے بڑا جہاد ہے اور اس وقت جتنی جماعتیں اور افراد اس حکومت کے خلاف ہمارے ساتھ ہیں وہ جہاد ِ افضل کررہے ہیں۔

ڈاکٹر طاہر القادری کا کہنا تھا کہ ہماری ساری جدوجہد انصاف اور مساوات کے لئے ہے ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے عوام بھی اسی طرح بہتر زندگی گزاریں جس طرح ساری دنیا کے ترقی یافتہ ملکوں کے عوام گزارتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت غاصب ہے اور ہر وقت پاکستان آرمی  کہ خلاف سازشوں میں مشغول رہتی ہے جو کہ ہماری سرحدوں کی محافظ ہے ہم چاہتے ہیں  کہ ہم نظام کو تبدیل کرکے پاک فوج کو نیا جذبہ عطا کریں۔

یوم ِ شہدا کی تقریب کے مناظر

یوم ِ شہدا کی تقریب کے مناظر

علامہ طاہر القادری نے کارکنوں سے کہا کہ انقلاب کے لئے تیار ہوجائیں جو آپ پر ظلم کریں آپ ان کا ہاتھ توڑ دیں ظالم کو ظلم نہ کرنے دیں ، لڑائی نہیں کرنی لیکن جدوجہد کی حفاظت کے لئے دہشت گردوں کو پوری قوت سے پیچھے دھکیل دیں۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے اپنے کارکنوں کو وصیت کی کہ اگر میں اس جدوجہد میں شریف برادران کا سازش کا شکار ہو کر قتل ہوجاؤں تو ان کو چھوڑنا مت۔ خون کا بدلہ خون ہے، میرا بدلہ ضرور لینا ہے۔

عوامی تحریک سے اظہار ِ یکجہتی کے لئے پاکستان تحریک انصاف، عوامی مسلم لیگ۔ متحدہ قومی موومنٹ، آل پاکستان مسلم لیگ ، مجلس وحدت المسلمین اور پاکستان مسلم لیگ ق کے رہنماؤں نے بھی تقریب کے شرکاء سے خطاب کیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top