The news is by your side.

Advertisement

لڑکیوں کی تعلیم کیلئے لڑنے والی ملالہ کو نوبل انعام مل گیا

اوسلو: ملالہ یوسف زئی پاکستان سے نوبل انعام لینے والی دوسری شخصیت اور دنیا کی کم عمر ترین انعام یافتہ قرار پاگئی۔

نوبل انعام کمیٹی کے سربراہ کا کہنا ہے ملالہ کا جرم یہ تھا کہ اس نے لڑکیوں کی تعلیم کے آواز بلند کی ، قوم کو سر بلندکرنے والی ملالہ یوسف زئی بارہ جولائی انیس سو ستانوے میں پیداہوئی ہے، گیارہ برس کی عمرمیں گل مکئی کے نام سے بی بی سی ویب سائٹ پربلاگ لکھنا شروع کیا، اپنے بلاگز میں ملالہ نے بلا خوف وخطر سوات میں بچیوں کو تعلیم کے زیور سے محروم رکھنے اور طالبان کے خوفناک عزائم سے آگاہ کیا۔

انہوں نے سوات میں بچیوں کو تعلیم کی طرف راغب کرنے انتھک جدوجہد کی، جس کی پاداش میں طالبان نےنو اکتوبر دوہزار بارہ کو ملالہ یوسفزئی کو اس وقت نشانہ بنایا جب وہ سکول سے گھرلوٹ رہی تھی،برطانوی وزیراعظم گورڈن براون نے بھی ملالہ کی خدمات کا اعتراف کرتے ہوئے اقوام متحدہ میں خراج تحسین پیش کیا تھا ۔

ملالہ نے کئی بین الاقوامی ایوارڈ اپنے نام کیے،جن میں انٹرنیشنل چلڈرن پیس پرائز، پہلا پاکستانی نیشنل یوتھ پرائز۔ ورلڈ چلڈرن پرائز سمیت امن کا نوبل انعام اپنے نام کیا، کینیڈین حکومت نے ملالہ کی خدمات کا اعتراف ان کو اعزازی شہریت سے نوازا، بارہ جولائی دوہزار تیرہ میں ملالہ نے اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹر خطاب کیا جس میں تعلیم کے حصول پر زور دیا۔

 ستمبر دوہزار تیرہ میں برمنگھم میں ملالہ کے نام سے لائبریری کا افتتاح ہوا، مئی دوہزار چودہ میں ملالہ کو ہیلی فیکس یونی ورسٹی نے ڈاکٹریٹ کی اعزازی ڈگری سے نوازا۔۔اپریل دوہزار تیرہ میں نیویارک ٹائم کے فرنٹ پیج پر ملالہ کا پوسٹر چھپا اور دنیا کی سو بااثر شخصیات میں ان کا نام شامل ہوا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں