site
stats
خیبر پختونخواہ

پشاوردہشتگردی:رواں سال ستر افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے

پشاور میں دہشت گردی کی کارروائیاں جاری ہیں۔رواں سال آٹھ سےزائد بڑے واقعات میں ستر کے قریب افراد جان سے گئے۔تفصیلات کے مطابق رواں سال پشاور میں دہشت گروں نے کئی کارروائیاں کیں۔ جن میں درجنوں انسانی جانیں ضائع ہوئیں.

تفصیلات کے مطابق اس سال کا پہلا دھماکا سولہ جنوری کو ہوا،جب دہشت گردوں نے تبلیغی مرکز میں دھماکہ کرکےدس افراد کی جان لی، تئیس جنوری کو اسکیم چوک کے قریب ورکشاپ میں دھماکے نے چھ افراد کو موت کی نیند سلادیا۔

دو فروری کو پشاور کے سینما میں دہشت گردوں نے اس وقت ہینڈ گرنیڈز پھینکے جب ہاؤس فل تھا، واقعے میں پانچ افراد کی جان گئی، چار فروری کو کوچہ رسالدار کے قریب خود کش دھماکے میں دس افراد جاں بحق ہوئے۔

دس فروری کو عیسیٰ خیل میں خو دکش دھماکے میں پانچ افراد لقمہ اجل بنے۔گیارہ فروری کو شمع سینما میں یکے بعد دیگرے دو دھماکے ہوئے جس میں تیرہ افرادجان سے گئے۔

چودہ مارچ کو سربند کے علاقے میں پولیس موبائل کو نشانہ بنایا گیا۔واقعے میں بارہ افراد کی جان گئی ، آج سے پہلے پشاور میں آخری خودکش دھماکہ چار ماہ پہلے گیارہ مئی کو ارباب نیاز اسٹیڈیم میں ہوا تھا جہاں متاثرین وزیرستان کی رجسٹریشن جاری تھی۔ خود کش حملے میں چھ افراد جاں بحق ہوئے تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top