The news is by your side.

Advertisement

کے کے کو کون سا مرض لاحق تھا؟ پوسٹ مارٹم میں تہلکہ خیز انکشافات

نئی دہلی: بھارتی گلوکار کرشنا کمار کناتھ المعروف (کے کے) کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں تہلکہ خیز انکشاف ہوا ہے۔

پولس ذرائع کا کہنا ہے کہ پوسٹ مارٹم کے معائنے سے معلوم ہوا ہے کہ ان کے دل کے گرد چربی کی تہہ تھی جو سفید ہوگئی تھی اور جب دل کھولا گیا تو والوز سخت ہوگئے تھے، پوسٹ مارٹم رپورٹ کو ہسٹوپیتھو لوجیکل ٹیسٹ کے لیے بھیجا جا رہا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ہسٹوپیتھو لوجیکل ٹیسٹ کرانے کا فیصلہ گلوکار کے جسم سے ملنے والی ادویات کے نمونے ہیں، کے کے جسم سے وٹامن سی، اینٹی ایسڈز سمیت دس مختلف دوائیں سیرپس کے ساتھ ملی ہیں جو تیزابیت، سینے کی جلن اور گیس میں فوری آرام فراہم کرتی ہیں جبکہ ان میں کچھ ہومیوپیتھک ادویات بھی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: کے کے کی عین موت سے قبل کی ہوٹل کی فوٹیج سامنے آ گئی

پولیس ذرائع نے بتایا کہ گلوکار اکثر اینٹی ایسڈ گولیاں کھاتے تھے، اکتیس مئی کی صبح بھی اُنہوں نے اپنے مینیجر کو بتایا تھا کہ انہیں کمزوری ہورہی جبکہ موت سے چند گھنٹے قبل گلوکار نے اپنی بیوی کو بتایا تھا کہ اُن کے کندھے اور بازوؤں میں درد ہو رہا ہے۔

ڈاکٹرز کے مطابق دل میں سختی وقت کے ساتھ ساتھ پیدا ہوتی ہے، اس لیے پوسٹ مارٹم رپورٹس کو ہسٹوپیتھولوجیکل ٹیسٹ کے لیے بھیجا جائے گا۔

یاد رہے کہ معروف بھارتی گلوکار اکتیس مئی کو کولکتہ میں ایک شو سے واپسی کے بعد نیو مارکیٹ تھانے کے علاقے کے تحت واقع گرینڈ ہوٹل میں گرگئے تھے اور اُنہیں شہر کے ایک نجی اسپتال لے جایا گیا تھا، جہاں انہیں مردہ قرار دیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں