spot_img

تازہ ترین

ایاز صادق قومی اسمبلی کے اسپیکر منتخب

مسلم لیگ ن کے سردار ایاز صدیق قومی اسمبلی...

کمالیہ: بارش میں گھر کی چھت گر گئی، ماں باپ اور بیٹا جاں بحق

کمالیہ کے علاقے فاضل دیوان میں مسلسل اور تیز...

حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں اضافہ کردیا

نگراں حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 4 روپے...

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے پر امریکا نے صاف انکار کر دیا

پاکستان ایران گیس پائپ لائن منصوبے پر امریکا نے...

کشمیر کے ایک گاؤں میں اجتماعی قبروں سے 2943 لاشیں برآمد

کشمیر کے 55 گاؤں میں اجتماعی قبروں سے 2943 لاشیں برآمد ہوئیں جن میں 80 فیصد کی شناخت نہیں ہوسکی۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں کی اجتماعی قبروں کا انکشاف ہوا، کشمیر کے 55 گاوٴں میں اجتماعی قبروں سے 2943 لاشیں برآمد ہوئیں، جن میں 80 فیصد کی شناخت نہیں ہوسکی۔

انگانہ چیٹرجی نے 2012 ء میں بانڈی پورہ، بارمولہ اور ضلع کوٹورا میں 2700 اجتماعی قبروں کی نشاندہی کی۔

ایسوی ایشن آف پیرینٹ ڈسپلاسیٹ پرسن کے مطابق 1989ء سے 800 کشمیری لاپتا ہیں ، 2011ء میں ہیومن رائٹس واچ نے بھاریت سرکار کو اجتماعی قبروں اور ناقابل شناخت لاشوں کی انکوائری کیلئے کمیشن بنانے کا مطالبہ کیا۔

کشمیر ہیومن رائٹس واچ نے چار اضلاع میں 2730 لاشوں کی اجتماعی قبروں کا سراغ لگایا، ستمبر 2006ء کی ہیومن رائٹس واچ کی رپورٹ کے مطابق بھارتی حکومت ان الزامات کی تحقیقات سے مسلسل فرار ہے۔

جولائی 2008ء میں یورپی پارلیمنٹ نے کشمیر میں اجتماعی قبروں کی قرارداد پاس کی، قرارداد میں بھارتی حکومت سے اجتماعی قبروں کی آزاد اور غیر جانبدار تحقیقات کا مطالبہ کیا۔

بعد ازاں بھارت نے تشدد کی تحقیقات کیلئے اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے کو 1993ء سے پابندی لگائی ہوئی ہے۔

Comments

- Advertisement -