The news is by your side.

Advertisement

عزیر بلوچ بچپن سے پیپلزپارٹی سے منسلک، اصل جے آئی ٹی رپورٹ میں انکشاف

کراچی : وفاقی وزیر علی زیدی کی جاری کردہ جےآئی ٹی میں انکشاف کیا گیا ہے کہ عزیر بلوچ بچپن سے پیپلزپارٹی سے منسلک ہے اور اس کے دوستوں میں ذوالفقارمرزا کے ساتھ فریال تالپور،قادرپٹیل،شرجیل میمن کا نام شامل ہیں  جبکہ فریال تالپور،آصف زرداری کےکہنے پرسرکی قیمت ختم کی گئی۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر علی زیدی نے عزیر بلوچ جےآئی ٹی رپورٹ کی کاپی میڈیا کو جاری کردی، جاری کردہ جےآئی ٹی رپورٹ پر 4 دستخط ہیں، رپورٹ پر آئی ایس آئی،ایم آئی،رینجرز، آئی بی کے دستخط ہیں جبکہ اسپیشل برانچ ،سی آئی ڈی افسرکےدستخط نہیں اور سندھ حکومت نے جو جےآئی ٹی جاری کی اس پر 6 دستخط ہیں۔

علی زیدی کی جاری کردہ جےآئی ٹی کاپی میں عزیربلوچ کے دوستوں میں ذوالفقارمرزا کے ساتھ فریال تالپور،قادرپٹیل،شرجیل میمن کا نام شامل ہیں، جےآئی ٹی کاپی کےمطابق عزیر بلوچ بچپن سے پیپلزپارٹی سے منسلک ہے۔

جاری کردہ جےآئی ٹی کاپی میں یوسف بلوچ نے2010میں مخالفین کےقتل پر آصف زرداری کاتعریفی پیغام دیا، یوسف بلوچ نے کہا مخالفین کے قتل پر’’بڑے صاحب‘‘خوش ہیں اور پیغام ملنےکےبعد عزیر بلوچ نے مخالفین کیخلاف کارروائیوں میں تیزی لائی۔

جے آئی ٹی کاپی کے مطابق یوسف بلوچ نےعزیربلوچ کو بتایا فریال تالپور،آصف زرداری کےکہنے پرسرکی قیمت ختم کردی گئی اور ریاست کی طرف سے مقدمات بھی سندھ حکومت نے ختم کردیے ہیں۔

جےآئی ٹی رپورٹ میں بتایا گیا کہ 2013میں قائم علی شاہ کے وزیراعلیٰ بننے کے فوری بعد ملزم نے عشائیہ دیا ، عشائیے میں قائم علی شاہ، فریال تالپور،قادر پٹیل نے شرکت کی۔

علی زیدی کی جاری کردہ جےآئی ٹی کاپی کےمطابق آصف زرداری نے یوسف بلوچ کو کہا عزیر بلوچ کو کسی دوسری پارٹی میں نہ جانے دیاجائے، یوسف بلوچ عزیر بلوچ اور آصف زرداری کےدرمیان کو آرڈینیٹر کا کردار ادا کرتا تھا اور یوسف بلوچ کے ذریعے پیپلز پارٹی کی ایک قومی،2 صوبائی نشستیں عزیر بلوچ کودی گئیں۔

جےآئی ٹی کاپی میں بتایا گیا کہ 2012میں پیپلزپارٹی سےمنسلک رہنے کیلئے آصف زرداری اور فریال تالپور نے 114گریڈ کی 500نوکریاں دیں اور فریال تالپور نے عزیر  بلوچ کو لیاری کو پیپلزپارٹی کا گڑھ برقرار رکھنے کا کہا ، فریال تالپور نے کہا مخالفین کے خلاف بندوق استعمال کریں مگر لیاری پیپلزپارٹی کا گڑھ رہنا چاہیے۔

جےآئی ٹی رپورٹ کےمطابق 2012میں قادرپٹیل نے ہاکس بے روڈ پر جعلی کاغذات بناکرپلاٹ پر قبضہ کیا ، شیراز کامریڈ نے پلاٹ پر تعمیرات روکنے کی کوشش کی  تو قادرپٹیل عزیر بلوچ سے مدد مانگی اور عزیر بلوچ کابیان ہے کہ قادرپٹیل نے مدد کیلئے 50لاکھ روپے دیئے اور قادرپٹیل کے دوست حبیب جوکھیو کو پلاٹ پر قبضے میں مدد کرائی ۔

علی زیدی کی جاری کردہ جےآئی ٹی کاپی میں کہا گیا کہ عزیر بلوچ کا بیان ہے کہ حبیب جوکھیو سےمواچھ گوٹھ میں پلاٹ پر قبضے کےعوض8لاکھ روپے ملے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں