The news is by your side.

لیوس کیرول: ایک مقبول ناول نگار جو ماہرِ ریاضی بھی تھا

لیوس کیرول کا بچّوں‌ کے لیے تخلیق کردہ محیّرالعقول اور دل چسپ واقعات پر مبنی ناول بعنوان ’ایلس ان ونڈر لینڈ‘ (Alice’s Adventures in Wonderland) 1865ء میں شایع ہوا تھا۔ یہ کہانی کتابی شکل میں اپنے قارئین اور بعد میں‌ فلمی پردے پر شائقینِ سنیما میں بھی مقبول ہوئی۔

اس ناول کی مقبولیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ اسے آج بھی بچّے ہی نہیں بڑے بھی نہایت شوق سے پڑھتے ہیں جب کہ اس کی اشاعت کو ڈیڑھ سو سال سے زائد کا عرصہ بیت چکا ہے۔ اِس مدّت میں ایلس ان ونڈر لینڈ پر مبنی کئی ڈرامے اور فلمیں اسکرین کی زینت بنیں۔ ناول کے مصنّف لیوس کیرول نے 14 جنوری 1898ء کو یہ دنیا ہمیشہ کے لیے چھوڑ دی تھی۔

لیوس کیرول کا اصل نام چارلس ڈاج سن تھا۔ لیکن وہ اپنے قلمی نام سے پہچانے گئے۔ لیوس کیرول کا تعلق برطانیہ سے تھا جہاں انھوں نے 27 جنوری 1832ء کو آنکھ کھولی۔ ابتدائی تعلیمی مدارج طے کرتے ہوئے وہ اساتذہ میں ذہین طالبِ علم کی حیثیت سے پہچانے گئے۔ ان کی دل چسپی کا مضمون ریاضی تھا اور وہ اس کے ماہر بنے۔ بعدازاں آکسفورڈ میں‌ ریاضی کے استاد مقرر ہوئے۔ انھوں نے اپنے علمی ذوق و شوق اور تحقیق و اختراع سے کام لے کر ریاضی اور سائنس کے متعدد بنیادی اصول اور قاعدے سکھانے کے طریقے بھی ایجاد کیے۔ وہ علم و فنون کے بھی دلدادہ تھے اور اسی شوق نے انھیں لکھنے کی جانب مائل کیا۔

لیوس کیرول نے شارٹ اسٹوریز لکھیں اور شاعری بھی کی جب کہ مذکورہ ناول نے انھیں دنیا بھر میں شہرت دی۔ وہ فوٹو گرافی اور مصوّری کا بھی شوق رکھتے تھے اور ایک آرٹسٹ کی حیثیت سے یہ ہنر بھی آزمایا۔

لیوس کیرول نے نوعمری میں شارٹ اسٹوریز لکھنا شروع کیں اور ساتھ ہی نظمیں‌ بھی کہنے لگے۔ انھوں نے اپنی تخلیقات مقامی جرائد کو بھیجیں تو مدیران نے ان کی حوصلہ افزائی کی اور کہانیاں شایع ہونے لگیں۔ 1854ء سے 1856ء کے دوران مصنّف کی حیثیت سے ان کی تحریروں کو قومی سطح کے اخبارات اور رسائل میں جگہ ملی۔ لیوس کیرول اپنی تخلیقات میں طنز اور مزاح کے لیے بھی مشہور ہوئے۔

مصنّف کے مشہور ناول ایلس ان ونڈرلینڈ کو نقاد حیران کن ادبی شہ پارہ تسلیم کرتے ہیں۔ یہ ایک ایسی کہانی ہے جو قاری کو حیران کن دنیا میں لے جاتی ہے۔ اس میں‌ ایک معصوم لڑکی خرگوش کے بِل میں گر جاتی ہے، اور پھر وہ ایک انوکھی دنیا میں پہنچ جاتی ہے جہاں‌ اسے عجیب و غریب اور حیرت انگیز واقعات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اس ناول کی خوبی یہ ہے کہ اسے پڑھتے پڑھتے قاری بھی ایک بہت مختلف دنیا میں پہنچ جاتا ہے۔ اپنے ناول کی اوّلین اشاعت میں کیرول نے اپنے ہی تیّار کردہ تصویری خاکے شامل کیے تھے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں