spot_img

تازہ ترین

کراچی میں موسلا دھار بارش کا کوئی امکان نہیں، چیف میٹرولوجسٹ

چیف میٹرولوجسٹ سردار سرفراز نے کہا ہے کہ کراچی...

ایاز صادق قومی اسمبلی کے اسپیکر منتخب

مسلم لیگ ن کے سردار ایاز صدیق قومی اسمبلی...

کمالیہ: بارش میں گھر کی چھت گر گئی، ماں باپ اور بیٹا جاں بحق

کمالیہ کے علاقے فاضل دیوان میں مسلسل اور تیز...

حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں اضافہ کردیا

نگراں حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 4 روپے...

نوبیل انعام یافتہ فلسفی اور ماہرِ‌تعلیم برٹرینڈ رسل

دنیا برٹرینڈ رسل کو ایک فلسفی، ماہرِ تعلیم اور مؤرخ کے طور پر جانتی ہے۔ نوبیل انعام یافتہ برطانوی رسل کے کئی فکری مباحث اور اقوال بھی مشہور ہیں۔

برٹرینڈ رسل 2 فروری 1970ء کو چل بسا تھا۔ برطانوی فلسفی برٹرینڈ رسل کا فلسفۂ تعلیم بہت مشہور ہے۔ ایک بہترین معلّم اور ماہرِ تدریس کے طور پر رسل نے روایتی طریقہ ہائے تدریس اور رسمی تعلیم کے بجائے طالبِ علموں میں اختراع اور ایجاد کی صلاحیتوں کو پروان چڑھانے پر زور دیا۔ رسل نے تدریسی و تعلیمی نظام میں جدّت اور آزادیٔ اظہار کو اہمیت اور فروغ دینے پر اصرار کیا اور اس کا خیال تھا کہ اس طرح ننھّے اور ناپختہ ذہنوں کے تخیّل کو وسعت اور اختراع کو بلا رکاوٹ پنپنے کا موقع ملتا ہے۔ اس کے علاوہ وہ مذہب اور خدا کے وجود پر اپنے مباحث اور دلائل کی وجہ سے بھی مشہور ہے۔

برٹرینڈ رسل کو علم کا شیدائی کہتے ہیں جس کا اوّلین عشق ریاضی کا مضمون تھا۔ لیکن اس کی استعداد اور قابلیت صرف اسی مضمون تک محدود نہ رہی بلکہ عمر اور تعلیم کے مدارج طے کرتے ہوئے رسل دوسرے مضامین میں بھی طاق ہوا۔

ذہین اور باصلاحیت برٹرینڈ رسل 18 مئی 1876ء کو انگلستان کے مشہور علاقے ویلز میں پیدا ہوا۔ وہ کسی معمولی خاندان کا فرد نہیں‌ تھا بلکہ اس کے والد کا نام سَر جان رسل تھا جو انگلستان کے وزیرِ اعظم رہے۔ وہ کٹّر مذہبی گھرانے کا فرد تھا اور اس کا شمار برطانوی طبقۂ اشرافیہ میں ہوتا تھا۔ رسل کی ابتدائی تعلیم ویلز میں ہوئی۔ والدین کی مصروفیات بہت زیادہ تھیں جس کے باعث وہ اپنے بیٹے کو بچپن میں وقت نہیں‌ دے پاتے تھے اور یوں رسل کا خاصا وقت تنہائی میں‌ کھیل کود اور سیکھنے سمجھنے میں گزرتا تھا۔ اسے شروع ہی سے غور و فکر کی عادت پڑ گئی تھی۔ رسل کی ذاتی زندگی میں کچھ تلخ یادیں اور مختلف مشکلات بھی شامل رہیں، مگر اس نے اپنی پڑھائی اور سیکھنے کے شوق کو اہمیت دی اور آگے بڑھتا چلا گیا۔

1890ء میں کیمبرج یونیورسٹی سے ریاضی کی اعلیٰ سند حاصل کرنے کے بعد رسل نے اسی یونیورسٹی میں تدریسی ذمہ داریاں سنبھالیں۔ بعد کے برسوں میں‌ وہ دنیا بھر کی جامعات میں لیکچرز دینے اور اساتذہ کی تربیت کا کام انجام دیتا رہا۔ برٹرینڈ رسل نے نیشنل یونیورسٹی آف پیکنگ (چین)، یونیورسٹی آف کیلیفورنیا اور دوسرے اعلیٰ تعلیمی اداروں میں بطور مدرّس اپنی ذمہ داریاں نبھائیں۔

برٹرینڈ رسل کی علمی و ادبی خدمات اور فلسفے کے میدان میں کارناموں کی بات کی جائے تو اس نے سائنس، تاریخ، سیاست، معاشرت، جنگ، امن، قانون اور انسانی حقوق سے متعلق کئی کتب اور مضامین تحریر کیے جو بہت مفید اور معلوماتی ہیں۔ وہ ایک ایسا بیدار مغز استاد، ادیب اور فلسفی تھا جس نے ویتنام کی جنگ کے زمانے میں امریکا کو ظالم کہا اور حکومت کو مطعون کیا۔ رسل کو اسی انسان دوستی کی پاداش میں‌ پابندِ سلاسل بھی رہنا پڑا۔

1950ء میں اسے ادب کا نوبیل انعام دیا گیا تھا۔ برٹرینڈ رسل کی آپ بیتی 1967ء میں شائع ہوئی تھی اور اسے دنیا کی مقبول ترین آپ بیتیوں‌ میں شمار کیا جاتا ہے۔ رسل ان دانش وروں میں شامل تھا جس نے 1970ء میں عرب اسرائیل جنگ کے دوران کھلم کھلا اسرائیل کی مخالفت کی تھی اور اسے غاصب قرار دیا تھا۔

برٹرینڈ رسل کا نظریہ تعلیم طالبِ علموں میں اختراعی اور ایجادی صلاحیتوں کو پروان چڑھانے پر زور دیتا ہے‌ نسلِ نو کی تعلیم و تربیت اور ان کی ذہنی صلاحیتوں‌ کو اجالنے کے ضمن میں برٹرینڈ رسل کے یہ آٹھ اقوال بہت مشہور ہیں جو طلبا ہی نہیں اساتذہ کی بھی راہ نمائی کرتے ہیں۔

1- کسی چیز کے حوالے سے حتمی اور یقینی رویّہ مت اپنائیے۔

2- کسی تجرباتی مرحلے پر ہرگز نہ کہیے کہ کوئی بہت اہم انکشاف ہوا ہے، کیوں‌ کہ اس کا ثبوت تجرباتی حقائق کی روشنی میں ازخود سامنے آجائے گا۔

3- کام یابی کا یقین ہوجانے کے بعد بھی غور و فکر ترک نہ کیجیے اور اپنے تخیّل کی حوصلہ شکنی سے بچیے۔

4- علمی اختلاف کی صورت میں‌ زور زبردستی کے بجائے دلیل سے کام لیجیے، کیوں کہ اصرار اور زور زبردستی سے کسی مباحثے میں جیت، غیر حقیقی اور فریب کے سوا کچھ نہیں‌ ہوتی۔

5- کسی کی رائے کو طاقت سے کچلنے کی کوشش نہ کریں ورنہ خود آپ کی رائے اور بیان کو دبا دیا جائے گا۔ اگر آپ اپنی رائے کا احترام کروانا چاہتے ہیں تو دوسروں کی آرا کو عزت و احترام دیں، تبھی آپ کی بات سنی جائے گی۔

6- اپنی رائے کے منفرد اور خارج از بحث ہونے سے مت گھبرائیں‌، کیوں کہ آج جس فک اور رائے کو قبول کر لیا گیا ہے، کبھی اسے بھی خارج از امکان تصوّر کیا گیا تھا۔

7- اپنی ذہانت کا ادراک کرنے کے جتن کیے بغیر لطف اندوز ہونا سیکھیے، کیوں کہ جب ذہانت کو عقل کے پیمانوں کی مدد سے جانچنے کی کوشش کی جاتی ہے تو یہ مدھم پڑجاتی ہے۔

8- محتاط انداز سے ہمیشہ صداقت کا ساتھ دیجیے۔ اس لیے کہ اگر سچ پریشان کُن بھی ہو تو یہ اس سے کم ہوگا، جسے آپ منکشف کرنا چاہتے ہیں۔

برٹرینڈ رسل زندگی بھر تحریر اور تقریر میں‌ مصروف رہا۔ ایک ادیب اور کہانی کار کے طور پر رسل کا بہت کم ہی ذکر ہوتا ہے، لیکن اس کے افسانوں پر مشتمل دو کتابیں‌ بھی شایع ہوئی تھیں۔

Comments

- Advertisement -