برطانوی سیاح اولیور اسرائیل کے لق و دق صحرا میں لاپتہ London
The news is by your side.

Advertisement

برطانوی سیاح اسرائیل کے لق و دق صحرا میں لاپتہ

لندن : برطانوی سیاح جنوبی اسرائیل کے صحرا میں لاپتہ میں ہو گئے اُن سے آخری بار رابطہ سات ہفتے قبل ہوا تھا جب وہ صحرائی علاقے متسبی رمون میں موجود تھے۔

تفصیلات کے مطابق لندن کے قریبی علاقے ایسسکس کا رہائشی 29 سالہ اولیور نومبر کے آخری ہفتے سے سیاحت کے لیے اپنے پسندیدہ علاقے سے لاپتہ ہے۔

اولیور کے بھائی میتھیو کا کہنا ہے کہ بھائی کی گمشدگی نے ہمیں بے حال کردیا ہے‘ ہم  اپنے بھائی کی خیریت کے لیے سخت پریشان ہیں جب کہ  اسرائیلی حکومت کی دو ہفتوں سے جاری تلاش کی مہم بھی کارگر ثابت نہیں ہوئی ہے۔

میتھیو کا بین الاقوامی خبررساں ایجنسی سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ بھائی کا لاپتہ ہوجانا اتنا اچانک اور تکلیف دہ ہے کہ ہمیں سنبھلنے کا بھی موقع نہیں ملا اور یقین نہیں آتا کہ جو گھر آنے کی تیاریاں کر رہا تھا یوں اچانک گمشدہ ہوجائے گا۔

سیاحت کے دلدادہ اولیور شمالی آئرلینڈ میں پرورش میں پائی جب کہ وہ ایسسکس میں بطور مالی کام ک اس کے علاوہ مختلف فلاحی پروجیکٹس کی تکمیل کے لیے بیرون ملک کے دورے بھی کیا کرتے تھے جہاں وہ اپنی سیاحت کے شوق کو بھی پورا کرتے اور فلاحی خدمات بھی انجام دیتے تھے۔

اولیور کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ وہ اسرائیل میں اپنی گرل فرینڈ کے گھر میں رہائش پذیر تھے تاہم نومبر میں وہ وہاں سے روانہ ہو گئے اور ان کا ارادہ تھا کہ واپسی کے بعد چیلمس فورڈ میں کچھ دوستوں کے ہمراہ رہائش اختیار کریں گے۔

ذرائع کے مطابق تل ابیب یونیورسٹی کے زیر استعمال جگہ سے 90 منٹ کی مسافت پر اولیور نے بطور آبزرور ایک صحرا میں کیمپ لگا کر قیام کیا جہاں سے ایک بیگ ملا ہے جس میں اولیور کا پرس، کیمرہ، ٹیبلٹ اور موبائل فون وغیرہ ملا ہے تاہم خود اولیور کا کچھ پتہ نہیں چل سکا ہے۔

اسرائیلی حکومت کی تحقیقات کے مطابق اولیور سے متعلق کرنے والا آخری شخص ایک امریکی سیاح تھا جو سائیکل پرمحو سفر تھا‘ امریکی سیاح نے اولیور کو پینے کا پانی پیش کیا تھا یہ 21 نومبر کی بات ہے اور تب سے اب تک اولیور کا کچھ پتہ نہیں ہے۔

طویل عرصے سے رابطہ نہ ہونے پر ایسسکس میں موجود اولیمور کے دوستوں نے اہل خانہ سے رجوع کیا اور پولیس میں رپورٹ درج کرانے کا کہا تاہم پولیس نے وہاں سے کیس شمالی آئرلینڈ بھیج دیا جہاں خاطر خواہ پیشرفت نہیں ہو سکی ہے۔

اسرائیلی پولیس افسر کا کہنا ہے کہ برطانوی شہری کو آخری اسرائیل کے صحرائی علاقے متسبی رمون میں دیکھا گیا تھا اور گزشتہ دو ہفتوں سے اسی علاقے میں سرچ آپریشن جاری ہے تاہم اب تک لاپتہ سیاح کا کوئی کھوج نہیں مل سکا ہے

اسرائیلی پولیس افسر کا کہنا تھا کہ اب تک کسی بھی قسم کی واردات یا دہشت گردی سے جڑا کوئی عنصر سامنے نہیں آیا ہے اس لیے غالب امکان یہی ہے کہ اولیور اسرائیل کے لق و دق صحرا میں راستہ بھٹک گئے ہوں۔

دوسری جانب برطانوی حکومت کی جانب سے اولیمور کی تلاش میں کی جانی والی کوششوں سے غیر مطمئن اُس کے دوستوں کا کہنا ہے کہ یہ سوچ کر ہی دل دہل جاتا ہے کہ سب کی مدد کرنے والا دوست آج خود پانی کی ایک ایک بوند اور خوراک کے ایک نوالے کو ترس رہا ہو گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں