The news is by your side.

Advertisement

کراچی: زہریلے بن فروخت کرنے والی فیکٹریاں سیل

کراچی: صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں زہریلے بن فروخت کرنے والی 3 فیکٹریوں کو سیل کردیا گیا، فیکٹریوں میں گندے پانی اور ناقص اجزا سے بن بنائے جارہے تھے۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام ذمہ دار کون کی ٹیم نے سندھ فوڈ اتھارٹی کے ساتھ مل کر زہریلے بن فروخت کرنے والوں کو بے نقاب کردیا۔

کراچی کے علاقے اولڈ سٹی ایریا میں سالوں سے قائم بن بنانے والی 3 فیکٹریوں کو سیل کردیا گیا، یہ بن ٹھیلوں پر بکنے والے بن کباب وغیرہ کے لیے سپلائی کیے جاتے تھے۔

فیکٹریاں نہایت غلیظ حالت میں تھی جہاں گندگی کے ڈھیر لگے تھے، بن بنانے کے لیے استعمال ہونے والے اجزا بھی ناقص اور غیر معیاری تھے جبکہ گندا پانی استعمال کیا جارہا تھا۔

بن بنانے کے عمل میں استعمال ہونے برتن وغیرہ بھی گندگی و غلاظت سے بھرپور تھے۔ ان فیکٹریوں سے یومیہ 10 ہزار بن فروخت کیے جاتے ہیں۔

فیکٹریوں کے ملازم بغیر ماسک اور دیگر حفاظتی سامان کے زہریلے بن بنانے میں مصروف تھے، فیکٹری مالکان کا دعویٰ تھا کہ ان کے ملازم حفظان صحت کے اصولوں کو مدنظر رکھتے ہیں تاہم آج ہی وہ اس سے غفلت برتتے پائے گئے۔

فیکٹری مالکان کا یہ بھی شکوہ تھا کہ حکام بغیر اطلاع دیے ان کے پاس پہنچے۔

سندھ فوڈ اتھارٹی کے حکام کی جانب سے فیکٹری مالکان کو 2 آپشنز دیے گئے، یا تو وہ 2 لاکھ روپے کا جرمانہ ادا کریں یا پھر اسی رقم سے فیکٹریوں کی حالت درست کر کے انہیں بین الاقوامی معیار کے مطابق بنائیں۔

مالکان نے کوئی جائے فرار نہ پا کر فیکٹریوں کی حالت درست کرنے کا وعدہ کیا۔

حکام نے عارضی طور پر فیکٹریوں کو سیل کر کے مالکان کو اپنے دفتر رپورٹ کرنے کا حکم دیا اور ساتھ ہی وارننگ بھی دی کہ اگر حکام کی اجازت اور معاملات درست کیے بغیر فیکٹریوں کو کھولا گیا تو انہیں مستقل بنیادوں پر سیل کردیا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں