The news is by your side.

Advertisement

چینی سائنسدانوں کا ڈیلٹا وائرس سے متعلق بڑا دعویٰ

بیجنگ: دنیا بھر میں تباہی پھیلانے والے کرونا ڈیلٹا وائرس سے متعلق چینی حکام نے بڑا دعویٰ کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق چائنہ ڈیلی کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ چین میں جس ویکسین کی خوراکیں لگائی جارہی ہیں وہ نوول کروناوائرس کی ڈیلٹا قسم کو روکنے اور اس کیخلاف حفاظتی اثرات کا بہترین مظاہرہ کررہی ہیں۔

بیماری پر قابو پانے اور روک تھام کے مزکر (چائنہ سی ڈی سی) کے محقق فینگ زی جیان کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ دستیاب نتائج کے مطابق ڈیلٹا قسم نوول کرونا وائرس ویکسینز سے تحفظ کو کم کر سکتی ہے لیکن موجودہ ویکسین اب بھی کرونا لہر کیخلاف اچھی روک تھام اور حفاظتی اثرات پیدا کررہی ہے۔

فینگ کا کہنا ہے کہ کرونا کی ڈیلٹا قسم پہلی قسم کے وائرس سے تقریباً دوگنا زیادہ قابل انتقال رکھتی ہے اور یہ بہت تیزی سے پھیلتی ہے جس کے نتیجے میں مریضوں میں شدید علامات پیدا کرنے کا زیادہ امکان ہوتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کرونا وائرس کی نئی قسم نے خطرے کی گھنٹی بجا دی

بیماری پر قابو پانے اور روک تھام کے چینی مرکز میں ایک اور محقق شاؤ ئی مِنگ نے کہا کہ اگرچہ کوئی بھی ویکسین متعدی امراض کیخلاف سو فیصد تحفظ فراہم نہیں کرسکتی تاہم نوول کروناوائرس کی مختلف اقسام پر اب بھی دستیاب ویکسینز کے ساتھ قابو پایا جا سکتا ہے۔

شاؤ نے مزید واضح کیا کہ ثبوت کی بنیاد پر تحقیق سے ظاہر ہوا کہ چین کی مقامی نوول کرونا وائرس ویکسینز اسپتال داخل ہونے،شدید کیسز اور اموات کی شرح فعال طور پر کم کرتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں