سعودی عرب میں سنیما انڈسٹری آئندہ برس بحال ہوگی -
The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب میں سنیما انڈسٹری آئندہ برس بحال ہوگی

دبئی : سعودی عرب میں سنیما انڈسٹری کی بحالی کا موضوع ایک عرصے سے زیر بحث تھا‘ مگر اب اس فیصلے پر تصدیق کی مہر ثبت ہو گئی ہے۔

 بین الاقوامی خبر رساں ایجنسی رایٹرز کے مطابق سعوری عرب میں جلد سنیما انڈسٹری بحال کردی جائے گی اور غالب امکان ہے کہ 2018 کے اوائل میں سعودی عرب میں پہلا سنیما گھرکھل جائے گا۔

سعودی وزیر برائے اطلاعات و ثقافت عواد بن صالح نے اپنے تازہ بیان میں کہا ہے کہ انڈسٹری کی ریگولٹری باڈی کی حیثیت سے کمیشن برائے آڈیو ویژول میڈیا نے سنیما گھروں کو لائسنس جاری کرنے کے لیے کام شروع کر دیا ہے۔

انھوں نے مارچ 2018 میں پہلے سنیما کے افتتاح کی امید ظاہر کی ہے۔ واضح رہے کہ سعودی عرب میں مذہبی طبقات کی شدید مخالفت کے باعث سن 70میں سنیما گھروں کو بند کردیا گیا تھا۔

تجزیہ کاروں نے اس اقدام کو سعودی عرب کے سخت گیر معاشرے میں جاری اصلاحات میں کلیدی قرار دیا ہے۔

واضح رہے کہ اس سال کے وسط میں خواتین کو ڈرائیونگ کی اجازت دینے کے اہم فیصلے کے بعد طالبات کو یونیورسٹیوں میں موبائل فون استعمال کرنے کی اجازت بھی دے دی گئی تھی۔

بعد ازاں سعودی حکومت نے روشن خیالی  کی سمت ایک اور قدم آگے بڑھاتے ہوئے سرکاری چینل پر عرب لیجنڈ گلوکارہ ام کلثوم کا میوزک کنسرٹ نشر کیا تھا۔

سعودی عرب: سرکاری ٹی وی پر میوزیکل کنسرٹ نشر*

تجزیہ کاروں کے مطابق یہ تبدیلیاں سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے ویژن 2030 کا حصہ ہیں۔ جس کے تحت دارالحکومت ریاض کے نزدیک ایک عظیم الشان تفریحی شہر بنایا جائے گا، جس میں گالف کورسز، کار ریسنگ ٹریک اور سنیما گھروں کی تعمیر شامل ہیں۔

واضح رہے کہ گذشتہ برس بھی سعودی عرب سے سنیما انڈسٹری کی بحالی کے ساتھ عشروں پر محیط ثقافتی جمود ٹوٹنے کی خبریں آئی تھیں اور سعودی ثقافت اور فنون ایسوسی ایشن کے چیئرمین سلطان البازی نے اسے بدلتی ہوئی سماجی تبدلیوں کا نتیجہ قرار دیا تھا، تاہم پھر یہ معاملہ تاخیر کا شکار ہوگیا تھا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں