The news is by your side.

Advertisement

ایک نیا کام انسان سوچےپھروہی کام چندماہ میں ہو جائے، بےحد خوشی ہوتی ہے، چیف جسٹس

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے محمد افضل کو قتل کیس میں شک کا فائدہ دیتے ہوئے بری کر دیا، چیف جسٹس آصف کھوسہ نے ریمارکس میں کہا ایک نیا کام انسان سوچےپھروہی کام چندماہ میں ہو جائے، بےحد خوشی ہوتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ویڈیولنک سے پرنسپل سیٹ اسلام آباد، لاہوررجسٹری اور پشاور رجسٹری میں وارا بندی کے تنازعے پر اللہ دتہ کے قتل سےمتعلق کیس کی سماعت ہوئی ، چیف جسٹس آصف کھوسہ کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے سماعت کی۔

وکیل نے کہا واقعہ 2002 میں پیش آیا، جس پر چیف جسٹس نے کہا چار لوگوں کو20 سے زائد زخم آئے، ایسا لگ رہا ہے کہ دفاع کی بنا پر قتل ہوا ، دونوں طرف سے بھرپور حملے کیئے گئے۔

سپریم کورٹ نے محمد افضل کو شک کا فائدہ دیتے ہوئے بری کر دیا، ٹرائل کورٹ نے محمد افضل کو سزائےموت کی سزا دی تھی اور ہائی کورٹ نے محمد افضل کو 2011 میں بری کر دیا تھا۔

دوران سماعت چیف جسٹس کےاہم ریمارکس میں کہا آج تو کمال ہو گیا ہے،بہت خوشی محسوس ہو رہی ہے، ایک نیا کام انسان سوچےپھروہی کام چندماہ میں ہو جائے، بےحد خوشی ہوتی ہے۔

چیف جسٹس نے کہا آج ہم لاہور،پشاوررجسٹری کی ایک ساتھ مقدمےکی سماعت کررہےہیں، ٹیکنالوجی کے باعث لوگوں کے پیسوں کی بچت ہوگئی ہے، وکلاپرنسپل سیٹ کا کیس، دوسری رجسٹری کیس میں ایک ساتھ پیش ہوسکتے ہیں۔

جسٹس آصف کھوسہ کا کہنا تھا ویڈیولنک کےمقدمات کی سماعت کیلئےایک مستقل بینچ بنائیں گے، ویڈیولنک کیلئےبنایا گیابنچ پوراہفتہ مختلف رجسٹریوں کے مقدمات کی سماعت کرےگا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں