The news is by your side.

کیا بچوں کو کورونا ویکسین لگوانی چاہیے ؟؟

ایسے وقت میں جب کہ برطانیہ اور افریقہ میں کرونا وائرس کی ایک نئی قسم ڈیلٹا پھیلنے کی خبریں آ رہی ہیں جو نہ صرف کوویڈ19 کے مقابلے زیادہ تیزی سے پھیلتا ہے بلکہ بچوں پر بھی حملہ کرتا ہے۔

یہاں یہ سوال پیدا رہا ہے کہ کرونا سے بچاؤ کی ویکسین بچوں کو دی جا سکتی ہے یا نہیں ؟ اس کا جواب یہ ہے کہ بچوں کو اس وائرس کے حملے سے بچانے کیلئے ویکسی نیشن بہت ضروری ہے۔

کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے بڑے پیمانے پر ویکسین لگانے کا عمل بھی جاری ہے تاہم کئی ممالک نے اب اس عمل کو تیز کرتے ہوئے اپنے 18 برس سے کم عمر افراد کو بھی ویکسین لگانے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔

دوسری جانب برطانیہ میں بھی 12 سے 15 برس کے بچوں کو کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے فائزر کی ویکسین دی جائے گی تاہم ابھی انہیں اس ویکسین کی صرف ایک خوراک دی جائے گی۔

اس کے علاوہ کچھ دیگر ممالک بھی بچوں کو ویکسن لگا رہے ہیں لیکن طریقہ کار مختلف ہے،  پاکستان کے نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر(این سی او سی) کے مطابق پاکستان میں 15 سے 17 برس کے بچوں کی ویکسینیشن کا عمل 13 ستمبر سے شروع ہو چکا ہے۔

اس حوالے سے اے آر وائی نیوز کے پروگرام "باخبر سویرا” میں پاکستان پیڈیاٹرک ایسوسی ایشن کے صدر پروفیسر جمال رضا نے ناظرین سے اہم باتیں شیئر کیں۔

انہوں نے کہا کہ ایسا کبھی نہیں کہا گیا کہ کورونا وائرس بچوں پر حملہ آور نہیں ہوتا لیکن اس کی شرح کم تھی، اب وقت نے یہ بھی ثابت کردیا ہے کہ نئی قسم ڈیلٹا کے آنے سے بچوں کی بڑی تعداد اس سے متاثر ہورہی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ جس طرح بڑی عمر کا کورونا مریض صحت یاب ہونے کے بعد دیگر جسمانی پیچیدگیوں کا شکار ہوتا ہے اسی طرح چھوٹے بچے بھی مختلف بیماریوں میں مبتلا ہوسکتے ہیِں۔

اس موقع پر پروفیسر جمال رضا نے عوام سے اپیل کی کہ خدارا اس جان لیوا وائرس سے خود کو بھی بچائیں اور اپنے بچوں کو بچانے کیلئے ان کی ویکسی نیشن لازمی کرائیں۔

 

Comments

یہ بھی پڑھیں