The news is by your side.

Advertisement

جرمنی کرونا وائرس کا اینٹی باڈیز سے علاج کرے گا

برلن: جرمنی کرونا وائرس کے علاج کے لیے اینٹی باڈیز کا تجربہ کرنے جارہا ہے جس کے بعد وہ یہ تجربہ کرنے والا پہلا یورپی ملک بن جائے گا۔

بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق جرمنی کرونا وائرس کے علاج کے لیے ایٹنی باڈیز کا تجربہ کرنے والا پہلا یورپی ملک بننے جا رہا ہے، اینٹی باڈیز کے ذریعے سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے کرونا وائرس کا علاج بھی کیا گیا تھا۔

جرمنی کے وزیر صحت جینز سپاہن کا کہنا ہے کہ حکومت نے 4 ہزار 86 ملین ڈالر کے عوض 2 لاکھ خوراکیں خرید لی ہیں، جرمنی کی وزارت صحت کی ترجمان کا کہنا ہے کہ تمام مریضوں کو یہ خوراکیں مفت فراہم کی جائیں گی۔

جرمنی نے ایک امریکی دوا ساز کمپنی ریجنی رون اور ایلی للی سے اینٹی باڈی کاک ٹیل حاصل کی ہے۔

ریجنی رون کمپنی لیبارٹری میں تیار کردہ دو قسم کی اینٹی باڈیز کو ملا کر کاک ٹیل تیار کرتی ہے، ان اینٹی باڈیز میں انفیکشن سے لڑنے والے پروٹین موجود ہوتے ہیں جو کرونا وائرس کو انسانی خلیوں میں داخل ہونے سے روکتے ہیں۔

دوسری جانب ایلی للی نے کرونا کے علاج کے لیے صرف ایک اینٹی باڈی کے استعمال سے خوراکیں تیار کی ہیں، جرمن وزیر صحت کے مطابق آئندہ ہفتے 2 مختلف قسم کی اینٹی باڈیز یونیورسٹی اسپتالوں میں مہیا ہوں گی۔

جرمن وزیر صحت کا کہنا ہے کہ یورپی یونین میں جرمنی اینٹی باڈیز حاصل کرنے والا پہلا ملک ہے جو کرونا کے علاج میں ان کا استعمال کرے گا، انہوں نے مزید کہا کہ کرونا وائرس کے شروع کے اسٹیج میں اینٹی باڈیز کے ذریعے علاج بیماری کو مزید بگڑنے سے روک سکتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں