The news is by your side.

Advertisement

پنجاب میں کرونا وائرس کے 500 سے زائد نئے کیسز رپورٹ

لاہور: ترجمان پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کا کہنا ہے کہ صوبہ پنجاب میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کرونا وائرس کے 661 نئے کیسز رپورٹ ہوئے جبکہ مزید 22 مریض جاں بحق ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق ترجمان پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کا کہنا ہے کہ پنجاب میں کرونا وائرس کے 661 نئے کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد صوبے میں کرونا وائرس کے مجموعی مریضوں کی تعداد 1 لاکھ 47 ہزار 953 ہوگئی۔

ترجمان کے مطابق لاہور میں 380، گجرات میں 44، راولپنڈی اور اوکاڑہ میں 30، 30، سرگودھا میں 24، ملتان میں 19، فیصل آباد میں 18، فیصل آباد میں 18، سیالکوٹ میں 15، پاکپتن میں 14، بہاولپور اور چنیوٹ میں 12، 12 کیسز رپورٹ ہوئے۔

اسی طرح بھکر میں 8، رحیم یار خان میں 6، جہلم، مظفر گڑھ، گجرانوالہ، اور ڈیرہ غازی میں 5، 5، وہاڑی میں 4، خوشاب ساہیوال اور خانیوال میں 3، 3، بہاولنگر، منڈی بہاؤ الدین، شیخوپورہ، اور قصور میں 2، 2 جبکہ راجن پور، میانوالی، ٹوبہ ٹیک سنگھ، ننکانہ، جھنگ، لیہ، حافظ آباد اور نارووال میں 1، 1 کیس رپورٹ ہوا۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ صوبے میں کرونا وائرس سے مزید 22 اموات ہوچکی ہیں جس کے بعد کل اموات کی تعداد 4 ہزار 370 ہوچکی ہے۔ صوبے میں صحت یاب افراد کی تعداد 1 لاکھ 32 ہزار 769 ہوچکی ہے۔

ترجمان کے مطابق اب تک صوبے میں 26 لاکھ 69 ہزار 951 ٹیسٹ کیے جاچکے ہیں۔

ترجمان نے بتایا کہ صوبے کے 256 اسپتالوں میں کرونا وائرس کے علاج کی سہولیات موجود ہیں جن میں 8 ہزار 261 بستر کرونا وائرس کے مریضوں کے علاج کے لیے مختص ہیں۔

3 ہزار 744 بستر آکسیجن کی سہولیات کے ساتھ کرونا کے مریضوں کے لیے مخصوص ہیں۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ پنجاب کے مختلف شہروں میں آکسیجن کی سہولیات کے ساتھ 2 ہزار 179 بستر کرونا کے مریضوں کے لیے مختص ہیں جن میں 440 زیر استعمال اور 4 سو 29 خالی ہیں۔

صوبے میں کرونا وائرس کے مریضوں کے لیے 665 وینٹی لیٹرز مختص کیے گئے ہیں، لاہور میں 249، فیصل آباد میں 48، ملتان اور راولپنڈی میں 71، 71 وینٹی لیٹرز مختص کیے گئے ہیں۔

ترجمان کے مطابق لاہور میں 84، فیصل آباد میں 2، ملتان میں 36 اور راولپنڈی میں 10 وینٹی لیٹرز کرونا مریضوں کے زیر استعمال ہیں جبکہ 307 وینٹی لیٹرز خالی ہیں۔

دوسری جانب کرونا وارڈ میں ڈیوٹی انجام دینے والے اب تک 2 ہزار 896 ہیلتھ کیئر ورکرز کرونا وائرس کا شکار ہوئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں