The news is by your side.

دعا زہرا کی عمر کا تعین : کیس میں نیا موڑ آگیا

کراچی : عدالت نے دعا زہرا کی عمر کے تعین کے لیے دوبارہ میڈیکل بورڈ بنانے اور کیس کی مزید تفتیش کاحکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق جوڈیشل مجسٹریٹ شرقی میں دعا زہرا کے اغواء سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی، مدعی مقدمہ کے وکیل جبران ناصر اور کیس کے تفتیشی افسر عدالت میں پیش ہوئے۔

وکیل مدعی مقدمہ نے عدالت میں بتایا کہ چالان کا پورا انحصار صرف دو باتوں پر ہے ،چالان کا انحصار اس بات پر ہے کہ بچی کی عمر 17 سال ہے جبکہ دوسری بات کا انحصار دعا زہرا کے بیان ہے۔

وکیل نے کہا کہ سپریم کورٹ میں ہم نے کہا تھا کہ بچی کو شیلٹر ہوم بھیجا جائے میڈیکل بورڈ تشکیل دیا جائے۔

دوران سماعت جبران ناصر نے عدالت میں سپریم کورٹ کا آرڈر پڑھ کر سنایا اور کہا ہم نے کل عمر کے تعین کے حوالے سے سیکریٹری صحت کو درخواست دی ہے ، سپریم کورٹ نے ہمیں کہہ دیا ہے کہ عمر کے تعین سے متعلق ہائی کورٹ کی آبزرویشن رکاوٹ نہیں ہے۔

وکیل مدعی مقدمہ نے بتایا کہ دعا زہرا کے عمر 17 سال قرار دے کر مقدمہ سی کلاس کردیا ہے ،عمر کے تعین سے میڈیکل بورڈ تشکیل دئیے بغیر کیس کا سی کلاس میں منظور کرلیا جاتا ہے تو سپریم کورٹ کے آرڈر کا کیا ہوگا۔

وکیل کا مزید کہنا تھا کہ ملزم ظہیر کا پولیس کو دیا گیا بیان پڑھ کر سنانا چاہتا ہوں ،ملزم ظہیر کو ابھی تک گرفتار نہیں کیا گیا عدم گرفتار ہے،ملزم ظہیر نے پولیس کو دئیے گیے بیان میں کہا ہے کہ میری تین سال سے دعا زہرا دوستی ہے ، 17 اپریل کو دعا زہرا لاہور آئی میں ٹیکسی کا کرایہ 22 ہزار روپے ادا کیا، جوڈیشل مجسٹریٹ لاہور نے فری ویل سرٹیفیکیٹ جاری کیا تھا جس کے پاس دعا زہرا کا بیان ریکارڈ کرایا گیا۔

عدالت نے کیس میں مزید تفتیش اور میڈیکل بورڈ بنانے کا حکم دے دیا ، عدالت نے سیکریٹری صحت کو میڈیکل بورڈ بنانے کا حکم دیا، بورڈ دعا زہرا کی عمر کا تعین کرے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں