The news is by your side.

Advertisement

بھارت: حاملہ خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی اور تشدد کا اندوہناک واقعہ

نئی دہلی: بھارت میں جنسی زیادتی کے ایک اور اندوہناک واقعے نے انسانیت کو شرمسار کردیا، بااثر زمینداروں نے حاملہ خاتون کو یرغمال بنا کر اسے جنسی زیادتی اور بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق انسانیت کو شرمسار کردینے والا یہ واقعہ ریاست مدھیہ پور کے ایک گاؤں میں پیش آیا جہاں ایک بااثر زمیندار خاندان نے دلت خاندان پر ظلم کی انتہا کردی۔

گھر میں موجود دو بھائیوں نے مذکورہ زمینداروں کی زمین پر کام کرنے سے انکار کردیا تھا جس کے بعد 3 زمیندار بھائیوں نے ان پر بری طرح تشدد کیا جس کے بعد وہ دونوں اپنی جان بچانے کے لیے گاؤں سے بھاگ گئے۔

بعد ازاں تینوں زمیندار بھائیوں نے دلت خاندان کے گھر پر دھاوا بول دیا جہاں دونوں بھائیوں کی ماں، ایک بھائی کی حاملہ بیوی اور اس کے کمسن بچے موجود تھے۔

غنڈوں نے خواتین اور بچوں کو کئی روز تک گھر میں یرغمال بنائے رکھا، اس دوران وہ حاملہ خاتون کو بچوں کے سامنے جنسی زیادتی اور تشدد کا نشانہ بناتے رہے، جبکہ اس مکروہ فعل سے روکنے پر 70 سالہ بوڑھی ماں کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا۔

بدمعاشوں نے بغیر کسی خوف کے خواتین کو 4 روز تک انہی کے گھر میں یرغمال بنا کر رکھا، اس دوران انہیں نہ کچھ کھانے پینے دیا گیا، اور نہ ہی کسی کو باہر آنے جانے دیا گیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق حاملہ خاتون کے ساتھ انسانیت سوز سلوک کے بعد ان کا حمل بھی ضائع ہوگیا، یرغمال بنے رہنے کے دوران وہ شدید تکلیف میں رہی اور اسے ڈاکٹر کے پاس بھی نہیں جانے دیا گیا۔

پولیس تک بات پہنچائی گئی تو انہوں نے زمیندار خاندان پر ہاتھ ڈالنے سے بچنے کے لیے لاپرواہی اختیار کی، تاحال کسی مجرم کو گرفتار نہیں کیا گیا۔

اندوہناک واقعے کے بعد کانگریس کے مقامی عہدیداروں نے احتجاج کرنے دھمکی دی ہے، یوتھ کانگریس کے ضلعی صدر نے ریاستری وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان اور پولیس انتظامیہ کے خلاف سنگین الزامات عائد کیے ہیں۔

کانگریس نے وارننگ دی ہے کہ اگر اس کیس کے تمام مجرموں کو 24 گھنٹوں کے اندر نہیں پکڑا گیا تو کانگریس ضلعی اور ریاستی سطح پر احتجاج کرے گی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں