The news is by your side.

Advertisement

معروف اینڈرائیڈ ایپلیکشن کی اچانک بندش، وجہ کیا بنی؟

امریکی ٹیکنالوجی جائنٹ گوگل نے صارفین کا نجی ڈیٹا چرانے والی ایپلی کیشنز کو پلے اسٹور سے ہٹادیا گیا ہے۔

ٹیکنالوجی ویب سائٹ گیجٹس 360 کے مطابق گوگل نے پلے اسٹور سے درجنوں ایسی ایپس کو ہٹا دیا ہے جواستعمال کنندگان کے علم میں لائے بغیر ان کی نجی معلومات بشمول لوکیشن، فون نمبرز اور ای میل ایڈریس جمع کرنے میں مصروف تھی۔

گوگل حکام نے بتایا کہ معاملہ نوٹس میں آتے فوری کارروائی کی گئی کیونکہ ہم ان تمام ایپس کے خلاف فوراً کارروائی کرتے ہیں جو کہ ہماری پالیسیوں پرعمل درآمد نہیں کرتیں۔

گوگل ترجمان کے مطابق پالیسی کی خلاف ورزی او رصارفین کا ڈیٹا جمع کرنے پر جن ایپس پرپابندی عائد کی گئی ہے اس میں کیو آرکوڈ اسکینر، موسم کا حال بتانے والی ایپ، اور کچھ مذہبی ایپلی کیشنز بھی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: مختلف نمبرز کے لیے الگ الگ سمز کی ضرورت ختم ہوجائے گی

گوگل کے مطابق مبینہ طورپر یہ ایپس نقصان کوڈ پر مشتمل تھی جو انسٹال ہونے کے بعد خاموشی سے استعمال کنندگان کا ڈیٹا جع کررہی تھیں کیونکہ گوگل کی ڈیولپرکانٹینٹ پالیسی کے مطابق گمراہ کن ، نقصان دہ اور کسی نیٹ ورک، ڈیوائس اور کسی کی نجی معلومات کا استعمال سخت منع ہے۔

یاد رہے کہ گوگل نے پلے اسٹور سے چھ ایپلی کیشنز کو ہٹا دیا تھا جو کہ شارک بوٹ اسٹیلرمالویئر سے متاثر تھیں، اینٹی وائرس سلوشنز کی شکل میں موجود ان ایپلی کیشنز کو15 ہزار بار سے زائد مرتبہ ڈاؤن لوڈ کیا جاچکا تھا جب کہ ان میں سے کچھ ایپلی کیشنز کو 10 ملین سے زائد بار بھی ڈاؤن لوڈ کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں