The news is by your side.

Advertisement

یومِ وفات: مادام کیوری اپنی سائنسی دریافتوں کو قدرت کی خود پر مہربانی تصوّر کرتی تھیں

میری کیوری جنھیں ہم مادام کیوری کے نام سے جانتے ہیں، 4 جولائی 1934ء کو ہمیشہ کے لیے دنیا چھوڑ گئی تھیں۔ وہ نوبیل انعام یافتہ سائنس داں تھیں جنھوں نے تابکاری کے شعبے میں تحقیق اور اپنی دریافتوں کے سبب دنیا بھر میں‌ شہرت پائی۔ مادام کیوری طبیعیات اور کیمیا کے مضامین کی ماہر تھیں۔

7 نومبر 1867ء کو پولینڈ میں‌ پیدا ہونے والی مادام کیوری کے والد ریاضی اور فزکس کے استاد تھے جب کہ والدہ لڑکیوں کے ایک بورڈنگ اسکول کی نگراں تھیں۔ مادام کیوری نے فرانس کی جامعہ سے اپنی تعلیم مکمل کی اور پھر اپنے شوہر کے ساتھ سائنسی تجربات اور تابکاری پر کام میں‌ مشغول ہوگئیں۔ انھوں نے ریڈیم دریافت کیا، لیکن اس دریافت سے پیسہ کمانے کے بجائے کہا کہ ’’ریڈیم مہربانی اور کرم ہے جو دنیا کی ملکیت ہے‘‘۔

1934ء میں وہ خون کے خلیات کی ایک ایسی لاعلاج بیماری میں مبتلا ہوگئیں جو بہت زیادہ تابکاری اثرات کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے۔ اسی برس ان کا انتقال ہوگیا۔

عظیم سائنس داں آئن سٹائن نے مادام کیوری کو ان الفاظ میں خراج عقیدت پیش کیا تھا: ’’ماری کیوری کی قوّت، اس کی قوّتِ ارادی، اس کی درویش صفتی، اس کی غیرجانب داری، اس کی لازوال منصف مزاجی … یہ تمام چیزیں ایسی ہیں جو شاذ و نادر ہی کسی ایک فرد میں اکٹھی ہوتی ہیں۔ اس کا عجز و انکسار حد سے بڑھا ہوا تھا۔‘‘

تابکاری (radioactivity) کے شعبے کی بانی مادام کیوری نے دو مرتبہ نوبیل انعام حاصل کیا۔ انھوں نے طبیعیات کا نوبیل 1903ء میں جب کہ کیمیا کا یہ انعام انھیں 1911ء میں ملا جس کی وجہ ریڈیم اور پولونیم کی دریافتیں تھیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں