The news is by your side.

Advertisement

دعا زہرا سے ملاقات کے بعد والدین کا بڑا دعویٰ

کراچی : دعا زہرا کی والدین نے بیٹی سے ملاقات کے بعد دعویٰ کیا ہے کہ دعا ہمارے ساتھ جانا چاہتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ میں دعا زہرا نے والدین سے ملاقات کی ، جس کے بعد والدہ نے دعویٰ کیا ہے کہ دعا نے میرے ساتھ جانے کا کہا ہے، پولیس دوبارہ عدالت لے جانے کے بجائے اپنے ساتھ لے گئی ہے۔

جس کے بعد دعا زہرا کی والدہ کی طبیعت خراب ہوئی اور وہ زمین پر گر گئیں۔

والد مہدی کاظمی نے میڈیا سے گفتگو سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہم نے دعا زہرا سے چیمبر میں ملاقات کی ، بچی سے آرام سے بات کی اس نے کہا گھر جانا چاہتی ہوں ، ہم نے جج صاحب سے کہا بچی دوبارہ بیان دینا چاہتی ہے لیکن جج صاحب نے دوبارہ بیان نہیں لیا۔
یاد رہے سندھ ہائی کورٹ میں دعا زہرا کیس کی سماعت ہوئی ، دعازہرااور اس کے شوہر کو عدالت میں پیش کیا گیا۔

مزید پڑھیں : دعا زہرا کی میڈیکل رپورٹ کوعدالت میں چیلنج کردیا گیا

وکیل درخواست گزار نے کہا کہ عدالت نے گزشتہ سماعت پر میڈیکل کرانے کا حکم دیا تھا، ہم نے کچھ دستاویزات پیش کرنی ہے۔

جسٹس جنید غفار کا کہنا تھا کہ آپ نے جو بھی پیش کرنا ہے ٹرائل کورٹ میں پیش کریں، ہمارے پاس بازیابی کا کیس تھا ، بچی بازیابی ہو گئی ہے۔

پراسکیوٹر جنرل سندھ نے کہا کہ کیس نمٹا دیا جائے ،باقی معاملات کیلئے کیس ٹرائل کورٹ بھیج دیں، جس کے بعد عدالت نے دعا زہرا کو والدین سے ملنے کی اجازت دے دی تھی۔

یاد رہے والد مہدی کاظمی کے وکیل الطاف کھوسو ایڈووکیٹ نے دعا زہرا کی میڈیکل رپورٹ کی قانونی حیثیت پر سوال اٹھائے تھے۔

الطاف کھوسو ایڈووکیٹ نے کہا تھا کہ عمرکے تعین کیلئے میڈیکل بورڈ تشکیل دیا جانا چاہیے تھا، ہڈیوں کے ذریعے عمر کے تعین کیلئے میڈیکل ٹیسٹ حتمی نہیں ہوتا۔

وکیل کا کہنا تھا کہ نادرا ریکارڈ میں دن،تاریخ سمیت مکمل تفصیلات ہوتی ہیں،دستاویزقانونی ہوتےہیں، میڈیکل سرٹیفکیٹ کی قانونی حیثیت کو چیلنج کیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں