جمعرات, مئی 23, 2024
اشتہار

سینیٹ میں الیکشن ایکٹ 2017 میں ترمیم کا بل منظور

اشتہار

حیرت انگیز

اسلام آباد : سینیٹ میں الیکشن ایکٹ 2017 میں ترمیم کا بل منظور کرلیا گیا، جس کے تحت الیکشن کمیشن نیا شیڈول اورعام انتخابات کی تاریخ کااعلان کرے گا جبکہ الیکشن پروگرام میں ترمیم بھی کر سکے گا۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی زیر صدارت سینیٹ کا اجلاس ہوا، اجلاس میں الیکشن ایکٹ ترمیمی بل میں مزید ترامیم پیش کی گئیں۔

وزیرمملکت شہادت اعوان نے الیکشن ایکٹ دو ہزار سترہ میں ترمیم کا بل پیش کیا ،جسے ایوان نے کثرت رائے سے منظور کرلیا۔

- Advertisement -

بل میں کہا گیا کہ الیکشن ایکٹ کی سیکشن ستاون میں ترمیم کی گئی ہے، جس کے تحت الیکشن کمیشن نیا شیڈول اورعام انتخابات کی تاریخ کااعلان کرے گا جبکہ الیکشن پروگرام میں ترمیم بھی کر سکے گا۔

جوزہ بل کے مطابق آئین میں جس جرم کی سزا کی مدت کا تعین نہیں کیا گیا، وہاں نااہلی پانچ سال سے زیادہ نہیں ہوگی جبکہ الیکشن ایکٹ کی اہلی اور نااہلی سے متعلق سیکشن 232 میں ترمیم اہلیت اور نااہلی کا طریقہ کار، طریقہ اور مدت ایسی ہو جیسا آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 میں فراہم کیا گیا ہے۔

بل میں کہا گیا ہے کہ جہاں آئین میں اس کے لیے کوئی طریقہ کار، طریقہ یا مدت فراہم نہیں کی گئی ہے، اس ایکٹ کی دفعات لاگو ہوں گی، سپریم کورٹ ، ہائیکورٹ یا کسی بھی عدالتی فیصلے ، آرڈر یا حکم کے تحت سزا یافتہ شخص فیصلے کے دن سے پانچ سال کیلئے نااہل ہو سکے گا۔

مجوزہ بل میں کہنا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 62 کی کلاز ون ایف کے تحت پانچ سال سے زیادہ کی نااہلی کی سزا نہیں ہو گی، متعلقہ شخص پارلیمنٹ یا صوبائی اسمبلی کا رکن بننے کا اہل ہوگا۔

سینیٹ میں پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی کی جانب سے الیکشن ایکٹ دوہزار سترہ میں ترمیم بل کی مخالفت کی گئی۔

دوران اجلاس میں تاحیات نا اہلی کا قانون ختم کرنے کی ترمیم پر سینیٹر دلاور خان نے کہا کہ یہ کالا قانون ہے اسے ختم ہونا چاہئے ،کوئی بھی اس قانون کا شکار ہو سکتا۔

جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے ترامیم لانے کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ آج آپ پانچ سال تک نا اہلی لا رہے ہیں کل ایک سال تک لے آئیں گے،اگر یہ اتنا موثر ہے تو پھر سپلیمنٹری ایجنڈا کیوں لا رہے ہیں، آئین کے آرٹیکلز 62/63 واضح ہیں۔

سینیٹر شہادت اعوان کا کہنا تھا کہ عدالت کا کام نہیں کہ پارلیمنٹ کے اختیار کو ختم کرے۔

سینیٹ میں آزاد گروپ کے پارلیمانی لیڈر سینیٹر دلاور خان نے آئین کے آرٹیکل 62ون ایف کے تحت نااہلی سے متعلق اہم ترمیم سے متعلق کہا کہ جہانگیر ترین اور ملک کے تین دفعہ وزیراعظم نواز شریف اس قانون کا شکار ہوئے،یہ بل آج ہی پاس کریں، کل عمران خان بھی اس نااہلی کا شکار ہوسکتے ہیں۔

سینیٹر حافظ عبدالکریم نے الیکشن ایکٹ میں ترمیم پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ ترمیم موجودہ صورت حال میں ضروری ہے، ملک میں ایسے فیصلے ہوئے جس سے ملک کو نقصان دیا،پارلیمنٹ کے ممبر کا احتساب ہوتا ہے جب وہ انتقام کی صورت اختیار کرتا ہے تو ملک کو نقصان ہوتا ہے، پانچ سال کی ناہایلت کچھ ادارے کرتے ہیں ، جو شخص پسند نہیں ہوتا اسے ہمیشہ کے لئے نااہل کر دیتے ہیں۔

سینیٹر دلاور خان کا کہنا تھا کہ ملک کا تین مرتبہ وزیر اعظم بننے والے نواز شریف پر یہ تلوار پھیری گئی، پارلیمنٹ کا اختیار پارلیمنٹ کے پاس رہےناکہ ہمارے فیصلہ ہائی کورٹ یا سپریم کورٹ چلا جائے اور وہ تاحیات نااہل کردیں، یہ ڈریکونین قانون ہے۔

Comments

اہم ترین

ویب ڈیسک
ویب ڈیسک
اے آر وائی نیوز کی ڈیجیٹل ڈیسک کی جانب سے شائع کی گئی خبریں

مزید خبریں