The news is by your side.

لڑکی نے تین سال میں ہاتھوں سے قرآن کریم لکھنے کا اعزاز حاصل کر لیا

مراد آباد: بھارت میں ایک 17 سالہ لڑکی نے اپنے ہاتھوں سے تین سال کے اندر قرآن کریم لکھنے کی بڑی سعادت حاصل کر لی۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی ریاست اترپردیش کے شہر مراد آباد سے متصل گاؤں بھٹوالی کے رہنے والے مفتی سلطان کی 17 سالہ صاحب زادی فاطمہ نے تین سال کی قلیل مدت میں اپنے ہاتھوں سے قرآن کریم لکھنے کا پاکیزہ اعزاز حاصل کر لیا ہے۔

فاطمہ کے بارے میں بتایا گیا کہ وہ روزانہ نمازِ تہجد ادا کرتی ہیں، اور اس کے بعد 12 سے 15 گھنٹے تک قرآن کریم کی پڑھتی ہیں۔

فاطمہ کے استاد مولانا صداقت علی نے بتایا کہ فاطمہ کو اپنے ہاتھوں سے قرآن کریم لکھنے کا شوق تھا، تھوڑا وقت ملتا تو لکھنے لگ جاتیں۔

فاطمہ کے اس باوقار اور عظیم الشان امر کی تکمیل میں ان کے اہل خانہ کا بھی بھرپور تعاون رہا۔

قرآن کریم لکھنے میں درپیش رکاوٹوں کو دور کرنے استاد مولانا صداقت نے بھی فاطمہ کی مدد کی، فاطمہ نے یہ عظیم کارنامہ انجام دے کر جہاں ایک طرف ایمانی حمیت کا ثبوت پیش کیا، وہیں اپنے گاؤں اور شہر کا نام بھی روشن کیا ہے۔

بیٹی کی اس کامیابی پر فاطمہ کے والد بھی بہت خوش ہیں، انھوں نے کہا آج پورے گاؤں میں خوشی کا ماحول ہے، دور دور سے رشتہ دار اور دیگر جاننے والے بھی بیٹی کو مبارک باد دینے آ رہے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں