یکم اور 2 نومبر کو ہنگامہ آرائی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا فیصلہ -
The news is by your side.

Advertisement

یکم اور 2 نومبر کو ہنگامہ آرائی کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا فیصلہ

لاہور: وفاقی حکومت نے یکم اور 2 نومبرکو ہنگامہ آرائی کرنے، نجی و سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے والوں کے خلاف کارروائی کا فیصلہ کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی کی زیرِ صدارت اعلیٰ سطح کا اجلاس منعقد ہوا جس میں وزیرِ مملکت مواصلات مراد سعید، وزیرِ اعظم کے معاونِ خصوصی افتخار درّانی، ایف آئی اے، پی ٹی اے اور ٹریفک پولیس کے سینئر حکام نے شرکت کی۔

ایف آئی اے، نادرا اور پی ٹی اے سے شر پسندوں کی شناخت پر رپورٹس کل تک طلب

اجلاس میں شناخت میں آنے والے شر پسندوں کی فوری گرفتاریوں کا فیصلہ کیا گیا جب کہ ملک بھر سے جمع توڑ پھوڑ کے شواہد پر کارروائی کی حکمتِ عملی بھی ترتیب دی گئی۔

ایف آئی اے، نادرا اور پی ٹی اے سے شر پسندوں کی شناخت پر رپورٹس کل تک طلب کی گئیں، اجلاس میں شر پسندوں کی شناخت اور گرفتاری کے لیے وزارتِ دفاع سے بھی مدد لینے کا فیصلہ کیا گیا۔

وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا کہ ہنگامہ آرائی کرنے والوں نے محنت سے حاصل شدہ املاک کو انتہائی بے دردی سے برباد کیا، املاک کو نقصان پہنچانے والوں سے کوئی رعایت نہیں ہوگی۔


یہ بھی پڑھیں:  ریاستی طاقت استعمال کرتے تو نقصان کا اندیشہ تھا، فواد چوہدری


وزیرِ مملکت برائے داخلہ نے عوام سے بھی اپیل کی ہے کہ وہ شر پسندوں کی شناخت اور گرفتاری کے سلسلے میں تعاون کریں۔

دریں اثنا وزارتِ داخلہ نے شر پسندوں کے خلاف کارروائی کے لیے چاروں صوبوں کو مراسلہ لکھا، ایک نوٹیفکیشن کے ذریعے متاثرہ شہریوں سے بھی کہا گیا ہے کہ 5 نومبر کی شام تک حکومت کو تفصیلات سے آگاہ کیا جائے۔

 وفاقی حکومت کی ہدایت کی روشنی میں محکمہ داخلہ پنجاب میں سیل قائم کر دیا گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں