The news is by your side.

Advertisement

فرانسیسی شخص ’اسپائیڈر مین‘ بن گیا

پیرس: فرانسیسی شخص پنشن اصلاحات کے خلاف احتجاج میں مظاہرین کی حمایت کرنے کے لیے 48 منزلہ بلند و بالا عمارت پر چڑھ گیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق فرانس سے تعلق رکھنے والا 57 سالہ البن رابرٹ فرانس میں پنشن اصلاحات کے خلاف احتجاج میں مظاہرین کی حمایت کرنے کے لیے بغیر کسی حفاظتی اقدامات کے پیرس کی 48 منزلہ بلند و بالا عمارت پر چڑھ گیا اور عمارت پر چڑھنے کے لیے اسے 52 منٹ لگے۔

البرٹ کا کہنا تھا کہ عمارت پر چڑھنے کے دوران مجھے سردی کی وجہ سے بے حد مشکل ہوئی، میری عمر 57 سال ہے اور میں ریٹائرمنٹ کے قریب ہوں میں صرف بلند و بالا عمارت پر چڑھ کر ہی پیسے کماتا ہوں۔

عمارت پر چڑھنے سے قبل البن رابرٹ کا کہنا تھا کہ لوگ اپنی زندگی کے 40 سال غلامی کرکے گزار دیتے ہیں اور انہیں اپنی نوکری پسند بھی نہیں ہوتی ہے۔

البن البرٹ کو دنیا بھر میں بغیر رسی کے بلند و بالا عمارتیں سر کرنے کے حوالے سے جانا جاتا ہے، ان کا کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ لوگ ایک اچھی زندگی بسر کریں اس لیے آج سڑکوں پر جمع ہیں۔

فرانسیسی اسپائیڈر مین کے اس کارنامے کا مقصد فرانس میں جاری پنشن اصلاحات کے خلاف مظاہرین کی حمایت کرنا تھا۔

واضح رہے کہ اس سے قبل مالی سے تعلق رکھنے والا مسلم تارکین وطن محمود غساما نے پیرس میں ایک بچے کو بچانے کے لیے جان کی بازی لگادی تھی، کثیر المنزلہ عمارت سے گرتے بچے کو بچا کر فرانس کا ہیرو بن گیا تھا، فرانسیسی صدر نے ان کو صدارتی محل میں دعوت دی اور اعزازی شہریت بھی دی تھی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں