The news is by your side.

Advertisement

اسرائیل کے حق میں ٹوئٹ، اسرائیلی نژاد اداکارہ پر شدید تنقید

نیویارک: اسرائیل کے حق میں ایک ٹوئٹ نے اسرائیلی نژاد اداکارہ گال گیڈٹ کو مشکل میں ڈال دیا ہے، ٹوئٹ کے بعد انھیں تنقید کا سامنا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایک طرف جہاں فلسطینی شہریوں پر بم باری کے خلاف شوبز کی معروف شخصیات مذمت کا اظہار کر رہی ہیں، وہاں ہالی ووڈ کی ونڈر وومن اداکارہ نے اسرائیل کے حق میں ایک ٹوئٹ کر دیا ہے، جس پر ان پر شدید تنقید ہونے لگی ہے۔

اسرائیلی نژاد امریکی یہودی اداکارہ گال گیڈٹ نے ٹوئٹ میں 7 مئی سے جاری حالات کے تناظر میں لکھا کہ میرا دل رو رہا ہے، میرا ملک حالتِ جنگ میں ہے، میں اپنے اہل خانہ اور دوستوں کے لیے پریشان ہوں، میں اپنے لوگوں کے لیے پریشان ہوں۔

فلم ’ونڈر وومن 1984‘ کی ادکارہ نے لکھا برائی کا یہ سلسلہ طویل عرصے سے جاری ہے، اسرائیل کو بھی آزاد اور محفوظ قوم کی حیثیت سے جینے کا حق ہے، ہمارے پڑوسیوں کو بھی یہی حق ہے، میں متاثرین اور ان کے اہلخ انہ کے لیے دعا گو ہوں۔

اسرائیلی حملے میں 6 ماہ کے بچے کے علاوہ خاندان کے سبھی افراد شہید

گال گیڈٹ نے مزید لکھا میں اس ناقابل تصور دشمنی کے خاتمے کی دعا کرتی ہوں، دعا کرتی ہوں کہ ہمارے رہنماؤں کو اس مسئلے کا حل مل جائے تاکہ ہم امن کے ساتھ ایک دوسرے کے ساتھ رہ سکیں، میں اچھے دنوں کے لیے دعا گو ہوں۔

ہالی ووڈ اداکارہ کو اس ٹوئٹ کے بعد سوشل میڈیا پر شدید تنقید کا سامنا ہے، صارفین کا کہنا تھا کہ وہ ظالموں کی حمایت کر رہی ہیں، ایک صارف نے لکھا کہ آپ امن کی بات نہ کریں جب کہ آپ نے ماضی میں اسرائیلی دفاعی فورسز میں خدمات انجام دی ہیں، وہ فورسز جنھوں نے گلیوں میں پر امن طریقے سے چلنے والے بچوں اور بڑوں کو قتل کیا، ایک اور صارف نے لکھا یہ کہنے کی جرات نہ کریں کہ ہم پڑوسی ہیں کہ آپ آئی ڈی ایف کا حصہ رہی ہیں۔

جینٹرٹ نامی صارف نے لکھا کیا آپ نے کبھی خواتین پر حملوں، مردوں اور بچوں کی ہلاکتوں کی ویڈیوز دیکھی ہیں، آپ لوگوں کے لیے دعا نہیں کر سکتیں جب آپ خود ان میں شامل ہوں جنھوں نے ایسے اقدامات کا آغاز کیا ہو۔

نورالعیون نے لکھا ہم پڑوسی نہیں ہیں، یہ ہماری سرزمین ہے، آپ نے اسے طاقت سے حاصل کیا، ہمیں نکال دیا، پنجرے میں قید کر دیا اور ہمارے حقوق چھین لیے، آپ کی حمایت اربوں امریکی ڈالرز نے کی جب کہ ہمارے پاس کچھ نہیں تھا۔

واضح رہے کہ گال گیڈٹ کو اسرائیلی ڈیفنس فورسز کے ساتھ ماضی میں وابستہ رہنے پر تنازع کا سامنا رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں