The news is by your side.

Advertisement

کیا مودی سرکار سوئس بینک میں چھپا پیسہ واپس لائےگی؟ راہول گاندھی

نئی دہلی: بھارت کی اپوزیشن جماعت کانگریس کے صدر راہول گاندھی نے وزیراعظم نریندر مودی کے دورہ سوئیٹزلینڈ پر سوالات اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ کیا مودی سرکار سوئس بینک میں موجود غیر قانونی پیسہ واپس لاسکتی ہے؟۔

تفصیلات کے مطابق چند روز قبل بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے سوئیٹزرلینڈ کے شہر ڈوس میں منعقدہ عالمی اقتصادی فورم کے اجلاس میں شرکت کی تھی جس پر انہیں اپوزیشن کی سب سے بڑی جماعت نے شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

کانگریس کے سربراہ راہول گاندھی نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ’کیا بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو اپنا کیا وعدہ یاد ہے جس میں انہوں نے سوئس بینک سے بھارتیوں کا غیر قانونی پیسہ واپس لانے کی یقین دہانی کروائی تھی؟‘۔

خیال رہے کہ سوئیٹزرلینڈ کا شمار اُن ممالک میں ہوتا ہے جہاں لوگ خفیہ طریقے سے غیر قانونی پیسہ (سرمایہ) منتقل کرتے ہیں، اس ضمن میں بھارت اور سوئیٹزرلینڈ کے درمیان شہریوں کی سرمایہ کاری کے تبادلے سے متعلق سال 2016 میں سرکاری سطح پر معاہدہ طے پایا تھا۔

معاہدے کے مطابق سوئس بینک بھارتی شہریوں کے بینک اکاؤنٹ کی مکمل تفصیلات  اور تمام مطلوبہ شواہد کے حکام کے مانگنے پر اُن کے حوالے کرے گا۔

یاد رہے گزشتہ سال سپریم کورٹ آف پاکستان کی جانب سے پاناما کیس کا فیصلہ آنے کے بعد راہو گاندھی نے حکومتی پالیسی کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا تھا کہ ’پاناما لیکس میں نام آنے پر پاکستان میں ادارے اور قانون کام کررہے ہیں جس کی مثال وہاں کے وزیراعظم کے خلاف آنے والا فیصلہ ہے جبکہ بھارت میں کرپٹ عناصر کے خلاف کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی جاتی‘۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں