The news is by your side.

Advertisement

وفاقی حکومت کا سندھ کا بلدیاتی نظام سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد : وفاقی حکومت نے سندھ کا بلدیاتی نظام چیلنج کرنے کا فیصلہ کرلیا، وفاقی وزیر اسد عمر نے کہا ہے کہ سندھ میں مقامی حکومت کا موجودہ نظام عوام کو بااختیار نہیں بناتا۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمرنے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہا سپریم کورٹ میں سندھ کےمقامی حکومت کےنظام کیخلاف اپیل دائرکریں گے ، فیصلہ کل وزیراعظم کی سربراہی میں پی ٹی آئی کورکمیٹی اجلاس میں کیا گیا۔

اسدعمر کا کہنا تھا کہ سندھ میں مقامی حکومت کا موجودہ نظام عوام کو بااختیارنہیں بناتا، یہ قانون آئین کےمطابق عوام کو سیاسی، انتظامی، مالی با اختیار نہیں کرتا۔

یاد رہے چند روز قبل شہر قائد سے متعلق وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر کا کہنا تھا کہ جو حق دہائیوں سے نہیں ملا وہ دلانا ہے، مشترکہ جدوجہد ہے، کوشش ہے ساتھ مل کر کراچی کے لیے کام کریں، فروری کے پہلے ہفتے میں وزیراعظم کراچی آئیں گے اور منصوبوں کا افتتاح کریں گے، کراچی کے چھوٹے ترقیاتی منصوبے تو جاری ہیں، بڑے ترقیاتی منصوبے جلد شروع ہوں گے۔

ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے اسد عمر کا کہنا تھا کہ کراچی میں انشا اللہ 162 ارب روپے سے زائد کے منصوبے ہوں گے، پانی کا منصوبہ کےفور تاخیر کا شکار ہوا، سندھ حکومت جیسے ہی کےفور پر رپورٹ مرتب کرے گی کابینہ سے منظور کرائیں گے۔

انھوں نے کہا تھا کہ منصوبے کی لاگت کم سے کم دو گنا بڑھ چکی ہے، لاگت بڑھنے کے باوجود وفاقی حکومت کے فور منصوبے میں تعاون جاری رکھے گی، کراچی کے سب سے بڑے 2مسائل پانی اور ٹرانسپورٹ ہیں۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان نے جو وعدے کیے تھے ان پر لگن سے کام جاری ہے، وزیراعظم نے یہ کبھی نہیں کہا کہ نوکریاں صرف سرکار دے گی، نوکریاں سرکار میں بھی آتی ہیں اور پرائیوٹ سیکٹر میں بھی آتی ہیں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں