The news is by your side.

Advertisement

برطانیہ: کورونا کو مذاق اور سازش سمجھنے والے شخص کے ساتھ کیا ہوا؟

لندن: برطانیہ میں کورونا کو مذاق سمجھ کر اس کی حقیقت کو مسترد کرنے والا شہری مہلک وائرس کے باعث ہلاک ہوگیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق 46 سالہ گیری میتھیوز نامی برطانوی شخص کووڈ19 کو ایک سازشی خیال گردانتا تھا، اس کی نظر میں کوروناوائرس کی کوئی حقیقت نہیں تھی۔

Mr Matthews, who exercised regularly, is understood to have told a local conspiracy theorist that he suffered from asthma - though his family said they were not aware of his condition and suggested he may have kept an inhaler on him to exempt himself from wearing a mask

رپورٹ کے مطابق گیری میتھوز کورونا کا شکار ہونے کے بعد ہلاک ہوگیا، وہ کورونا ہدایات کی بھی مخالفت کرتا تھا جن میں فیس ماسک کا استعمال اور سماجی فاصلے شامل ہیں۔ مذکورہ شہری گزشتہ ایک ہفتے سے بخار میں مبتلا تھا لیکن جیسے ہی کووڈ19 ٹیسٹ میں رپورٹ مثبت آئی اس کے اگلے روز اس کی موت واقع ہوگئی۔

Gary Matthews, 46, had been ill for around a week before testing positive for coronavirus on January 12. He died alone in his flat in Shrewsbury, Shropshire the next evening, his family said

برطانیہ کے علاقے شروبری میں قائم ایک فلیٹ میں مذکورہ شخص مردہ حالت میں پایا گیا۔

گیری نے اپنے ہم خیال لوگوں کو بتایا تھا کہ وہ دمے کے مرض میں مبتلا ہے۔ اس بیماری کے باعث خاندان کے افراد نے اسے احتیاط کرنے اور ‘اِن ہیلر’ رکھنے کا بھی مشورہ دیا لیکن شہری نے کسی کی نہ سنی۔

برطانوی شہری کا کہنا تھا کہ وہ کورونا پر یقین نہیں رکھتا۔ اس نے حکومتی احکامات بھی ہوا میں اڑا دیے تھے۔ گیری کی طرح سوچ رکھنے والے اس کے دوستوں نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ کورونا سے نہیں مرا بلکہ خودکشی کی ہے۔ البتہ اس بات میں کس حد تک صداقت ہے پوسٹ مارٹم کے بعد حقیقت سامنے آجائے گی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں