تازہ ترین

’پاکستان کیلیے آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک سے اچھی خبریں آئیں گی‘

امریکا میں پاکستان کے سفیر مسعود خان نے کہا...

پاکستان کے بیلسٹک میزائل پروگرام کے حوالے سے ترجمان دفتر خارجہ کا اہم بیان

اسلام آباد : پاکستان کے بیلسٹک میزائل پروگرام کے...

ملازمین کے لئے خوشخبری: حکومت نے بڑی مشکل آسان کردی

اسلام آباد: حکومت نے اہم تعیناتیوں کی پالیسی میں...

ضمنی انتخابات میں فوج اور سول آرمڈ فورسز تعینات کرنے کی منظوری

اسلام آباد : ضمنی انتخابات میں فوج اور سول...

طویل مدتی قرض پروگرام : آئی ایم ایف نے پاکستان کی درخواست منظور کرلی

اسلام آباد: عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے...

بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی عید پر ملاقات کرانے کا حکم

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے عید کے موقع پر بانی پی ٹی آئی اور اہلیہ بشریٰ بی بی کی ملاقات کرانے کا حکم دیتے ہوئے ہفتےمیں ایک دن دونوں کی ملاقات کرانےکی ہدایت کردی۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ میں بنی گالا سب جیل سے اڈیالہ جیل منتقلی اور بشری بی بی کی بانی پی ٹی آئی سے ملاقات کی درخواست پر سماعت ہوئی۔

اسٹیٹ کونسل عبد الرحمن ،اسلام آباد انتظامیہ کی ڈائریکٹر لاء عدالت میں پیش ہوئے، اسٹیٹ کونسل نے کہا عدالت کے حکم پر ڈائریکٹر لاء نے بنی گالا سب جیل کا دورہ کرکے رپورٹ پیش کردی ہے۔

عدالت نے اسٹیٹ کونسل کو رپورٹ کی کاپی درخواست گزار کو فراہمی کی ہدایت کردی، اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا بنی گالا سب جیل کا دورہ کرنے والی افسر سہولیات سے مطمئن ہوئی ہیں۔

عدالت نے بشری بی بی کو اڈیالہ جیل منتقل نہ کرنے اور ملاقات نہ کرانے پر اڈیالہ جیل اور چیف کمشنر کی رپورٹ پر اظہاربرہمی کیا۔

جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا یہ سب سیاست ہے ، رپورٹ دیکھ کر عدالت نے اسٹیٹ کونسل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا رحمان صاحب یہ عدالت میں سیاست ہو رہی ہے۔

جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب کا کہنا تھا کہ اکتیس جنوری سزا کے بعد 141 خواتین داخل ہوئیں، آپ کہتے تھے جیل اوور کرواڈڈ ہے، آپ کا مطلب ہے کہ بس سیاست ہو ، کمیونٹی سمجھتی ہے کہ بنی گالا قید کرکے خیرات دے رہے ہیں۔

جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے مزید ریمارکس میں کہا ایک طرف کہا جا رہے ہیں کہ جگہ کم ہے قیدی زیادہ ہیں دوسری جانب 141 خواتین داخل ہو گئی ہیں، جب نئی خواتین جیل داخل ہوگئیں تو پھر منتقلی نہ کرنے کا جواز تو ختم ہوگیا، آپ لوگ عدالت کو مطمئن نہیں کر سکے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج کا کہنا تھا کہ آپ بلائیں ناں اپنے چیف کمشنر اور ایڈوکیٹ جنرل کو ، آپ لوگ تُلے ہوئے ہیں کہ رولا آف لاء کا انڈیکس صفر پر آجائے، آپ یہاں کیوں کھڑے ہیں پنجاب والوں کو بلاتے ہیں ، آپ ذرا اپنے سپرنٹینڈنٹ کو توہین عدالت کی کارروائی سے بچانے کی کوشش تو کریں ، آپ کا یہ موقف بینچ نمبر 7 نے مسترد کردیا تھا ، وہاں پنجاب کا سیئر لاء افسر پیش ہوا ، تاریخ پر ملزمان کا ملنا ، ملنا نہیں ہوتا ، وہ تو سماعت ہو رہی ہوتی ہے۔

جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کہا کہ ملاقات کا مطلب علیحدگی میں پراپر ملاقات ہوتا ہے، آپ نے کیس کی سماعت کے دوران ملاقات کا کہہ کر جان چھڑا لی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کا عید پر بانی پی ٹی آئی اور اہلیہ کی ملاقات کرانے کا حکم دیتے ہوئے ہفتے میں ایک دن بانی پی ٹی آئی اور بشریٰ بی بی کی ملاقات کرانے کی ہدایت کردی۔

عدالت نے کہا کہ حکومت کسی کی نجی پراپرٹی کو سب جیل کیسے قرار دے سکتی ہے اور آئندہ سماعت پر دلائل طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی کردی۔

Comments

- Advertisement -