The news is by your side.

جب قائدِ‌اعظم نے مجسٹریٹ سے اپنے بارے میں‌ رائے طلب کی!

بانیِ پاکستان قائدِاعظم محمد علی جناح کی ذہانت، ان کی قابلیت اور قائدانہ صلاحیتوں کے ساتھ اس زمانے میں انھیں ان کے ہندوستانی سیاسی مخالفین اور انگریزوں نے بھی سراہا ہے۔

مؤرخین نے محمد علی جناح کو بااصول، راست گو اور اجلے کردار کا مالک لکھا ہے۔ یہاں ہم قائدِ اعظم کی شخصیت سے متعلق ایک واقعہ نقل کررہے ہیں جو قارئین کی دل چسپی کا باعث بنے گا۔

قانون کی تعلیم مکمل کرکے لندن سے ہندوستان لوٹنے والے محمد علی جناح نے جب ممبئی (بمبئی) میں پیشہ ورانہ زندگی کا آغاز کرنا چاہا تو انھیں کیریکٹر سرٹیفیکیٹ کی ضرورت پڑی۔

پریکٹس شروع کرنے کے خواہش مند کسی بھی وکیل کے لیے لازمی تھا کہ وہ یہ سرٹیفیکیٹ حاصل کرے۔ ایک روز محمد علی جناح صبح سویرے ایک انگریز مجسٹریٹ کے بنگلے پر پہنچ گئے اور نوکر کے ہاتھ ایک چٹ پر اپنا نام اور ڈگری لکھ کر ضروری کام سے ملاقات کا پیغام اندر بھجوا دیا۔ مجسٹریٹ نے انھیں اندر بلا لیا۔

قائدِ اعظم نے اندر جاتے ہی سوال کیا:’’میرے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟‘‘

مجسٹریٹ نے جواب دیا: مجھے آپ بے حد شریف آدمی معلوم ہوتے ہیں۔‘‘ اس پر قائدِ اعظم نے اسی وقت ایک کاغذ آگے بڑھا دیا اور نہایت ادب اور شائستگی سے کہا: ’’جنابِ عالی، یہ الفاظ اس پر لکھ دیجیے۔ دراصل مجھے قانون کی پریکٹس شروع کرنے کے لیے کیریکٹر سرٹیفیکیٹ کی ضرورت ہے۔‘‘

Comments

یہ بھی پڑھیں