The news is by your side.

Advertisement

اسرائیلی افواج نے طویل ترین سرنگ تباہ کردی

یروشلم : اسرائیلی حکام نے کہا ہے کہ دفاعی فوج نے فلسطین کی مزاحمتی تنظیموں کی جانب سے اسرائیل میں داخل ہونےغزہ سے کھودی گئی طویل ترین سرنگ کو تباہ کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق اسرائیل کی وزارت داخلہ نے پیر کے روز اعلامیہ جاری کیا ہے جس میں حکام کا کہنا ہے کہ اسرائیلی دفاعی افواج نے مسلح گروہوں کی جانب سے اسرائیل میں داخل ہونے کے لیے کھودی گئی طویل ترین سرنگ کو بند کردیا ہے۔

اسرائیل کے وزیر دفاع ایوی گدور لیبرمان کا کہنا تھا کہ اسرائیلی افواج نے فلسطینی مزاحمتی تحریکوں کی جانب سے اسرائیل میں کارروائیاں کرنے کے لیے بنائی گئی 30 سرنگوں کو تباہ کیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ حالیہ دنوں برآمد ہونے والی سرنگ طویل ترین اور بہت گہری تھی۔ جو فلسطینی مزاحمتی مسلح گروہوں نے اسرائیل میں داخل ہونے کے لیے بنائی تھی۔

اسرائیلی افواج کے ترجمان کرنل جوناتھن کونریکس نے کہا ہے کہ مذکورہ سرنگ حماس اور دیگر آزادی پسند گروہوں نے فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی کے شمالی علاقے جبالیہ سے کھودی تھی۔

انا کا کہنا تھا کہ فلسطینی مزاحمتی تنظیموں نے مذکورہ سرنگ اسرائیلی شہر نہال اوز کی سمت میں بنائی گئی ہے جس کے ذریعے جنگوؤں کئی میٹرز تک اندر تو جاسکتے ہیں لیکن ان کے پاس باہر نکلنے کا کوئی راستہ نہیں ہے۔


غزہ میں کوئی بھی شہری معصوم نہیں ہے:اسرائیلی وزیردفاع کی ڈھٹائی


انہوں نے کہا کہ حالیہ دنوں برآمد ہونے والی سرنگ کئی کلومیٹرز تک غزہ جانب پھیلی ہوئی تھی اور اس میں دیگر کئی سرنگیں بھی نکل رہی تھی، جس میں کے ذریعے اسرائیل پر حملے کرنے کا خطرہ تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ اسرائیلی افواج کی جانب سے ایک ماہ میں پانچویں سرنگ برآمد کی گئی یے، جسے ایک ہفتے کے مختصر عرصے میں اس سرنگ کو پھتروں سے بھر دیا ہے جو طویل عرصے تک کے لیے ناکارہ ہوگی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں