The news is by your side.

Advertisement

کراچی، کرونا کے مریض کی لاش لے جانے سے روکنے پر لواحقین آپے سے باہر، اسپتال میں توڑ پھوڑ

کراچی: شہر قائد کے جناح اسپتال میں کرونا سے مرنے والے مریض کی لاش زبردستی ساتھ لے جانے سے روکنے پر مشتعل افراد نے شدید ہنگامہ آرائی کی اور ڈاکٹرز کو بھی تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔

نمائندہ اے آر وائی نیوز کے مطابق کراچی کے جناح اسپتال میں کرونا سے متاثرہ مریض کے انتقال کے بعد مشتعل افراد نے لاش زبردستی ساتھ لے جانے کی کوشش کی۔

ڈاکٹرز کے روکنے پر مرنے والے شخص کے لواحقین مشتعل ہوئے اور انہوں نے کرونا کے لیے مختص وارڈ کا کاؤنٹر اور گیٹ کے شیشے توڑ دیے جبکہ عملے کو بھی زدوکوب کیا۔لواحقین نے اسپتال میں موجود دیگر سامان کو نقصان پہنچایا۔

جناح اسپتال کی ایگزیکیٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر سیمی جمالی نے فوری طور پر پولیس اور رینجرز کو واقعے سے متعلق آگاہ کیا جس کے بعد رینجرز اور پولیس کی بھاری نفری اسپتال پہنچی۔

پولیس اور رینجرز کی نفری نے جناح اسپتال پہنچ کر ہنگامہ آرائی کرنے والے متعدد افراد کو حراست میں لیا۔

بعد ازاں تحریک انصاف کے رہنما اور رکن سندھ اسمبلی خرم شیر زمان نے ڈاکٹر سیمی جمالی سے ٹیلی فون پر رابطہ کیا اور پیش آنے والے واقعے سے متعلق تفصیلی گفتگو کی۔

خرم شیر زمان نے توڑ پھوڑ کرنے والے افراد کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ’عوام ایسی صورت حال میں صبر کا مظاہرہ کرے، اسپتالوں کاخیال رکھناحکومت ہی نہیں عوام کی بھی ذمہ داری ہے،اسپتالوں کو پہنچنے والے نقصان سےدوسرےمریض بھی متاثر ہوتے ہیں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں