The news is by your side.

Advertisement

ملکی تاریخ میں پہلی بار نوجوانوں کو 5 کروڑ روپے تک قرض دینے کا فیصلہ

اسلام آباد: وفاقی حکومت نے کامیاب جوان پروگرام میں بڑی تبدیلیاں کرتے ہوئے ملکی تاریخ میں پہلی بار نوجوانوں کے لیے قرض کی حد 5 کروڑ روپے تک بڑھانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خزانہ شوکت ترین کی زیر صدارت کامیاب جوان پروگرام سے متعلق اہم اجلاس منعقد ہوا، اجلاس میں گورنر اسٹیٹ بینک، وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے امور نوجوان عثمان ڈار اور معاشی ماہرین نے شرکت کی۔

وفاقی حکومت نے کامیاب جوان پروگرام میں بڑی تبدیلیوں کا فیصلہ کیا ہے، اجلاس میں کامیاب جوان پروگرام کو روزگار کی فراہمی کے لیے بڑا ٹول بنانے کی حکمت عملی پر غور کیا گیا۔

اجلاس میں ملکی تاریخ میں پہلی بار نوجوانوں کے لیے قرض کی حد 5 کروڑ روپے تک بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا، وزیر خزانہ نے رقم کی تقسیم کے عمل میں ہنگامی بنیاد پر تیزی لانے کا عندیہ دیا ہے۔

پروگرام کے تحت رقم کی تقسیم کے لیے 4 مختلف کیٹیگریز طے کر دی گئی ہیں، پہلی کیٹیگری 1 سے 5 لاکھ روپے تک مائیکرو فنانسنگ کی جائے گی۔ گاؤں، دیہات اور یونین کونسلز کی سطح پر رقم کی تقسیم ہوگی۔

دوسری کیٹیگری میں رقم 10 سے بڑھا کر 20 لاکھ روپے کر دی گئی۔ 20 لاکھ روپے کی رقم بغیر سیکیورٹی فراہم کی جائے گی۔ تیسری کیٹیگری میں رقم کی حد 20 لاکھ سے ڈھائی کروڑ روپے تک ہوگی، چوتھی کیٹیگری میں 5 کروڑ روپے تک کا قرض فراہم کیا جائے گا۔

اجلاس میں کہا گیا کہ 15 جون تک وفاقی کابینہ اور اقتصادی رابطہ کمیٹی سے تبدیلیوں کی منظوری لی جائے گی، رقم اسی سال سے بجٹ میں مختص کردی جائے گی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ نوجوانوں میں کم از کم 100 ارب روپے کی رقم فوری تقسیم کی جائے گی۔

وزیر خزانہ شوکت ترین کا کہنا تھا کہ کامیاب جوان پروگرام معیشت اور انڈسٹری کے لیے انقلابی پروگرام ثابت ہوگا۔ منصوبہ زراعت اور ایس ایم ای سیکٹر کو اپنے پاؤں پر کھڑا کر سکے گا، پروگرام میں شامل بینک قرض کی تقسیم کا عمل تیز کر دیں۔

وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے امور نوجوان عثمان ڈار کا کہنا تھا کہ زراعت، ایس ایم ایز، سروس سیکٹر اور مینو فیکچرنگ انڈسٹری کے لیے زبردست پیکج ہے، کم از کم 10 لاکھ نوجوانوں کو روزگار کے مواقع دینا چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آج کے فیصلے نوجوانوں کے مطالبات کو مد نظر رکھ کر کیے گئے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں