پی پی آمریت کی نہیں عوامی سوچ کی پیداوار ہے، خورشید شاہ -
The news is by your side.

Advertisement

پی پی آمریت کی نہیں عوامی سوچ کی پیداوار ہے، خورشید شاہ

سکھر: قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نے کہا ہے کہ ملک میں کسی پارٹی کو ضیاء الحق نے، کسی پارٹی کو مشرف نے اور کسی کو آشا پاشا نے بنایا لیکن پیپلز پارٹی کسی کی پروڈکٹ نہیں یہ پارٹی عوام کی امنگوں اور سوچ کی بیداوار ہے۔

سکھر میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ جو چھپ کر آتا ہے وہ لیڈر نہیں ہوتا بلکہ گیدڑہوتا ہے،محترمہ بے نظیر بھٹو کو دبئی ایئرپورٹ پر روک کر کہا گیا تھا کہ پاکستان نہ جاؤ ورنہ ماری جاؤ گی۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے کارکن جیلوں کی سختیاں بھگت چکے ہیں وہ جیلوں میں معافی نامے پر دستخط نہیں کر تے تھے اور کہتے تھے ہمیں جیلوں میں بھیج دو، ہم نے ضیا الحق کے دور میں جیلیں کاٹیں اور کوڑے کھائے۔33 برس میں ہمارے چہرے پر کبھی پریشانی نہیں آئی۔

خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی نے کبھی اقتدار کی سیاست نہیں کی ، میں سیاستدان ہوں جھوٹ بولنا میرے لیے قابل نفرت ہے، ڈیڑھ سال قبل اسپیکر کے پاس میٹنگ میں ایک لیڈر نے کہا کہ ایک گھنٹہ جیل میں جاؤں گا تو مرجاؤں گا، اس لیڈر کو یہ کہنا چاہیئے تھا کہ چاہے سو سال جیل میں ڈال دو میرے منہ سے یہ ہی الفاظ نکلیں گے کہ گو نوازگو۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ملک مسائل میں الجھا ہوا ہے پاکستانی نوجوانوں کو آگے بڑھنا ہوگا جو ڈکٹیٹر کی پیداوار لوگ ہوں گے وہ عوام کی خدمت کیا کریں گے؟ پیپلز پارٹی اگر اقتدار کی جنگ لڑتی تو بھٹو پھانسی پر نہیں چڑھتا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں