The news is by your side.

Advertisement

مغل بادشاہ اور اکوڑہ خٹک کا ایک صاحبِ سیف و قلم

اکوڑہ خٹک نامی گاؤں کو سولہویں صدی عیسوی میں ملک اکوڑہ خان خٹک نے آباد کیا تھا۔ مغل بادشاہ اکبر نے انھیں اس علاقے کی جاگیر داری اور اٹک کے گھاٹ سے دریائے سندھ عبور کرنے والوں سے راہداری (ٹول ٹیکس) وصول کرنے کا اختیار نامہ دیا تھا جس کے بعد ملک اکوڑہ خٹک نے اسی جگہ مستقل سکونت اختیار کی اور یہ علاقہ انہی سے منسوب ہوگیا۔

ملک اکوڑہ خٹک پشتو زبان کے مشہور شاعر اور مجاہد خوش حال خان خٹک کے پڑ دادا تھے۔ اب اسے پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ایک تاریخی قصبہ کی حیثیت سے پہچانا جاتا ہے جو ضلع نوشہرہ میں واقع ہے۔

اس قصبے کے ایک نام وَر اور پشتو کے ممتاز شاعر و ادیب خوش حال خان خٹک کو صاحبِ سیف و قلم بھی کہا جاتا ہے۔ پشتو ادب کو اپنی فکر اور تخلیقات سے مالا مال کرنے والے خوش حال خان خٹک کی تلوار اور سامانِ حرب میں مہارت بھی مشہور ہے۔ انھیں ایک مجاہد کی حیثیت سے یاد کیا جاتا ہے۔

خوش حال خان خٹک نے ادب کی مختلف اصناف میں طبع آزمائی کی اور پشتو زبان میں اپنے کمالِ فن کا مظاہرہ کیا۔ خطاطی ان کا ایک حوالہ ہے، سُر اور ساز سے انھیں لگاؤ تھا اور تلوار کے دستے پر ان کی گرفت مضبوط تھی۔

وہ 1613 میں اکوڑہ میں پیدا ہوئے تھے۔ اوائل عمری میں یوسف زئی قبیلے کے سردار بنے تو مغل حکم راں شاہ جہاں نے انھیں قبول کرلیا، مگر بعد میں کسی وجہ سے اورنگزیب نے ان کی سرداری قبول کرنے سے انکار کیا تو خوش حال خان خٹک نے میدان میں اترنے کا فیصلہ کیا، لیکن گرفتار ہوئے اور انھیں‌ رن تھمبور کے قلعے میں قید کردیا گیا۔ بعد میں‌ وفادار اور مطیع رہنے کے وعدے پر انھیں آزاد کیا گیا، مگر انھوں‌ نے شاہی افواج کے خلاف کارروائیاں‌ جاری رکھیں اور یہ معاملہ اتنا بڑھا کہ اورنگزیب خود ان کے خلاف میدان میں نکل آیا۔ خوش حال خان خٹک اور ان کے ساتھیوں کو اس میں شکست ہوئی اور پشتو ادب کا یہ نام ور اور حریت پسند 1689 میں اس دنیا سے رخصت ہوگیا۔

خوش حال خان خٹک کی زندگی، شخصیت اور فن پر کئی کتب لکھی جاچکی ہیں‌۔ انھیں‌ کثیر الجہت اور نابغہ روزگار شخصیات میں شمار کیا جاتا ہے جن کے تذکرے کے بغیر پشتو ادب کی تاریخ ادھوری ہے‌۔

Comments

یہ بھی پڑھیں