The news is by your side.

خیبرپختونخواہ کی پہلی خاتون فوڈ کنٹرولر

کراچی: صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع مانسہرہ میں ایک خاتون افسر کو تاریخ میں پہلی مرتبہ فوڈ کنٹرولر کے طور پر تعینات کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق خیبر پختونخوا میں پہلی مرتبہ ایک خاتون ضلعی فوڈ کنٹرولر بن گئیں ، اس سے قبل لاہور میں خاتون کو فوڈ کنٹرولر تعینات کیا گیا تھا۔

عظمی شاہ کا تعلق ایبٹ آباد سے ہے ، انھوں نے انگلش میں ایم فل کرکے گورنمنٹ کالج میں لیکچرار کی ملازمت اختیار کی لیکن ایڈمینسٹریٹو جاب میں دلچسپی نے انھیں 6 سال پہلے پی سی ایس مقابلے کا امتحان دینے کی جانب راغب کیا۔

جس کے بعد عائشہ نے امتحان دیا اور کامیابی حاصل کرکے فوڈ کے شعبے میں شمولیت اختیار کی۔

اے آر وائی نیوزکے پروگرام باخبر سویرا میں عظمی شاہ نے فوڈ کنٹرولر بننے کے بعد لوگوں کے ردعمل کے سوال پر بتایا کہ لوگ مجھے کالز اور میسجز کرکے سراہتے ہیں تو مجھے بہت خوشی ہوتی ہے۔

اپنی ذمہ داریوں کے حوالے سے خاتون فوڈ کنٹرولر نے کہا کہ پورے ضلع میں فلور ملز ہے، جس کی ہم اسپیکشن کرتے ہیں ، اس کے علاوہ فلور ملز کو گندم فراہم کرتے ہیں ، جو پورے ضلع میں تقسیم ہوتا ہے۔

عظمی شاہ کا کہنا تھا کہ اس کے بعد ہم پورے ضلع کے ہوٹلوں کی اسپیکشن اور قیمتوں کی ریگولیشن کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ میں ہمیشہ مشکلات کو چیلنجز کے طور پر لیتی تو اور میں نے یہ کبھی نہیں سوچاکہ میں لڑکی ہوں تو میں یہ نہیں کرسکتی، میں ہر جگہ اسپیکشن کے لیے جاتی ہوں۔

سیدہ عظمی شاہ نے مزید کہا کہ میرے والد خود گورنمنٹ ملازم ہیں اور وہ چاہتے تھے کہ میں اس شعبے میں آؤ ، اس کے علاوہ میری والدہ، میرے بھائی سب مجھے سپورٹ کرتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں