The news is by your side.

کویت: اومیکرون وائرس کے باعث غیر ملکی نئی پریشانی کا شکار

کویت سٹی: اومیکرون وائرس کے حالیہ پھیلاؤ کی وجہ سے کویت سے دوسرے ممالک چھٹیوں پر جانے والے غیر ملکیوں نے واپسی کے لیے کوششیں تیز کردی ہیں۔

ٹریول اینڈ ٹورزم مارکیٹ ذرائع کے مطابق گزشتہ کئی گھنٹوں سے گردش کرنے والی خبروں نے دنیا کے بہت سے ممالک کو وائرس سے متاثرہ ممالک کے لیے پروازوں کو معطل کرنے پر مجبور کیا ہے، جس کے باعث کویت واپسی کے لئے ٹکٹوں کی قیمت کو ایک بار پھر سے تقریباً دوگنا کردیا گیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ اس کی بڑی وجہ صحت کے حکام کی جانب سے اٹھائے جانے والے کسی بھی احتیاطی اقدامات کے اثرات ہیں جو کویت میں دوبارہ داخل ہونے کی صلاحیت کو محدود کر دیں گے جیسا کہ پچھلے سال وبائی امراض کے ابتدائی دنوں میں ہوا تھا۔

اسی خوف کی وجہ سے بہت سے تارکین وطن نے اپنی سالانہ تعطیلات کو مختصر کرنے اور اگلے مہینے کے آغاز میں کویت واپس آنے کا فیصلہ کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق حالیہ تناظر میں کویت میں بہت سے ٹریول اور ٹورازم دفاتر نے اپنے صارفین کی جانب سے واپسی کی تاریخوں کو تبدیل کرنے کی درخواستیں وصول کرنا شروع کر دیں ہیں۔

اس عمل نے اس مہینے کے بقیہ دنوں کے لیے پروازوں کے نظام الاوقات کی بہت زیادہ مانگ پیدا کر دی ہے جس سے واپسی کے سفر کی قیمت اوسط 69 دینار سے بڑھا کر ایک ٹکٹ کے لیے 200 دینار سے زیادہ ہو گئی ہ جبکہ البشیر نے اشارہ کیا کہ کویت سے باہر تمام مقامات کے لیے پروازیں اب بھی عام قیمتوں پر دستیاب ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: اومی کرون وائرس: کویت نے بڑی پابندیاں عائد کردیں

کویت کے سول ایوی ایشن ٹریول و ٹورزم ذرائع کا کہنا ہے کہ اگر کووڈ19 کے نئے ورژن کے انفیکشن کی شرح میں اضافے کے باعث عالمی سطح پر احتیاطی تدابیر اختیار کی گئیں تو اگلے چند دنوں کے دوران کویت واپسی کے سفر کی مانگ میں اضافے کی توقع ہو سکتا ہے۔

انہوں نے انکشاف کیا کہ متعدد تارکین وطن نے تصدیق کی کہ انہوں نے چار اہم پہلوؤں کے خوف سے کویت واپسی کا شیڈول تبدیل کرنا شروع کر دیا ہے۔

کویت اپنے احتیاطی صحت کے اقدامات میں سخت ترین ممالک میں سے ایک تھا جس میں طویل عرصے سے غیر ملکیوں کے داخلے پر پابندی شامل تھی۔

بہت سے تارکین وطن ٹرانزٹ ممالک میں 14 دنوں تک رہنے کے تجربے کو دہرانا نہیں چاہتے جو کہ لمبا ہو سکتا ہے جیسا کہ پہلے ماضی میں دیکھا گیا ہے۔

بہت سے تارکین وطن اپنی ملازمتوں کو برقرار رکھنے اور اپنی آمدنی جاری رکھنے کے لیے تیزی سے واپس آنے اور اپنے کام میں دوبارہ شامل ہونے کی کوشش کر رہے ہیں۔

بہت سے تارکین وطن کا خیال ہے کہ اگر ماضی کی طرح کی احتیاطی تدابیر اختیار کی جائیں تو زیادہ قیمت برداشت کرنے کے بجائے آنے والے دنوں میں سفری ٹکٹوں کی زیادہ قیمت برداشت کرنا بہتر ہے۔

ایسی صورت میں لاگت بہت زیادہ ہو جائے گی خاص طور پر ان کی آمدنی میں کٹوتی کے بڑھتے ہوئے امکانات کے ساتھ وہ اس وقت اسے برداشت نہ کر سکیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں