The news is by your side.

Advertisement

حمزہ شہباز کی حفاظتی ضمانت کی درخواست پر سماعت 8 اپریل کو ہوگی

لاہور : لاہورہائی کورٹ میں میں قائد حزب اختلاف پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کی حفاظتی ضمانت کی درخواست پر سماعت 8 اپریل کو ہوگی، درخواست میں کہا گیا ہے نیب اس وقت موجودہ حکمرانوں کا آلہ کار بنا ہواہے، عدالت ضمانت قبل ازگرفتاری منظور کرے اور نیب کوچھاپوں اور گرفتاری سے روکنے کا حکم دے۔

تفصیلات کے مطابق لاہورہائی کورٹ میں قائد حزب اختلاف پنجاب اسمبلی حمزہ شہبازکی حفاظتی ضمانت کی درخواست سماعت کےلیے مقرر کردی گئی ، جسٹس ملک شہزاد کی سربراہی میں 2رکنی بنچ 8 اپریل کوسماعت کرے گا۔

درخواست میں مؤقف اپنایا گیا حمزہ شہباز اپوزیشن لیڈر پنجاب ہیں ، میرے خاندان کوہمیشہ سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا گیا ، نیب اس وقت موجودہ حکمرانوں کا آلہ کار بنا ہواہے ، ڈی جی نیب شریف خاندان کے خلاف بیان بازی کرتے ہیں۔

حمزہ شہباز کا کہنا ہےخفیہ دستاویزات میڈیا کو بھجوائی جاتی ہیں ، ہمارے خلاف آشیانہ ، رمضان شوگر اوراثاثے کیس ناجائز بنائے ،مکمل تعاون کر رہاہوں ،گرفتاری اورچھاپوں کی ضرورت نہیں ، ہائی کورٹ کاحکم تھاگرفتاری سےپہلےآگاہ کیا جائےمگر نیب نے عمل نہ کیا۔

مزید پڑھیں : حمزہ شہباز نے نیب کے وارنٹ گرفتاری کو لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کردیا

درخواست میں استدعا کی گئی عدالت ضمانت قبل ازگرفتاری منظور کرے اور نیب کوچھاپوں اور گرفتاری سے روکنے کا حکم دے۔

حمزہ شہباز نےضمانت قبل از گرفتاری کے لئے لاہورہائی کورٹ سےرجوع کیا جبکہ وارنٹ گرفتاری کو بھی چیلنج کیا ہے۔

خیال رہے نیب ٹیم آج دوسرے روز بھی قائد حزب اختلاف پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کو  گرفتار کرنے شہبازشریف کی رہائش گاہ 96ایچ پہنچ گئی ہیں، نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ حمزہ شہباز کو ہر صورت گرفتارکریں گے۔

مزید پڑھیں : نیب ٹیم حمزہ شہباز کو گرفتار کرنے شہبازشریف کی رہائش گاہ پہنچ گئی

یاد رہےگذشتہ روز لاہور میں قومی احتساب بیورو (نیب) کی ٹیم نے حمزہ شہباز کی گرفتاری کے لئے ان کی رہائش گاہ پر چھاپہ مارا اور سوا گھنٹے کے قریب ن لیگی رہنماؤں اور کارکنوں کی مزاحمت کے بعد ٹیم انہیں گرفتار کرنے میں ناکام رہی تھی، حمزہ شہباز کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں چھاپہ مارا گیا۔

نیب حکام حمزہ شہباز کی گرفتاری کا وارنٹ بھی ساتھ لیکر آئے، تاہم انھیں شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا، اس دوران ایک اہلکار کے کپڑے بھی پھاڑے دیئے گئے اور ٹیم کو روکنے کیلئےحمزہ شہبازکی رہائش گاہ کے مرکزی دروازے کے باہر لیگی رہنماؤں اورکارکنوں نے دھرنابھی دیا۔

ڈی جی نیب لاہورنےصورتحال سےچیئرمین نیب کوآگاہ کیا، صورتحال کے پیش نظر مشاورت کےبعدگرفتاری کافیصلہ ملتوی کردیاگیا تھا۔

نیب نے اعلامیے میں کہا تھا کہ نیب لاہور کی ٹیم حمزہ شہباز کی آمدن سے زائد اثاثہ جات اور مبینہ منی لانڈرنگ کے کیس میں ٹھوس شواہد کی بنیاد پر گرفتاری کے لیے گئی تھی تاہم حمزہ شہباز کے گارڈز کی جانب سے غنڈہ گردی کا مظاہرہ کیا گیا جبکہ حمزہ شہباز کےمحافظوں نےنیب اہلکاروں کو دھمکیاں دی

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں