The news is by your side.

Advertisement

اسکولوں میں کتابوں کی کمی پر وزیر تعلیم گرفتار

تریپولی: لیبیا کے اسکولوں میں کتابوں کی فراہمی میں غفلت برتنے کے الزام میں وزیر تعلیم موسیٰ المقریف کو گرفتار کرلیا گیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق لیبیا کے اسکولوں میں درسی کتب کی شدید کمی پر وزیر تعلیم موسیٰ المقریف کو گرفتار کیا گیا، ان سے نصابی کتب کی طباعت کے معاہدے اور وجوہات کا تعین کرنے کے لیے انکوائری جاری ہے۔

پراسیکیوشن سروس کے مطابق وزیر تعلیم موسیٰ المقریف کو گزشتہ روز گرفتار کیا گیا تھا اور انہیں ممکنہ لاپرواہی پر تحقیقات کے تحت حفاظتی تحویل میں رکھا گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق اس کیس میں وزیر برائے منصوبہ بندی سمیت متعدد دیگر افسران بھی مطلوب ہیں۔

طرابلس کے ایک طبی کلینک کے سیکریٹری ذکیہ عبدالصمد کا کہنا ہے کہ میرے تین بچے پرائمری اسکول میں پڑھ رہے ہیں اور ہر کلاس کے لیے کتابوں کی فوٹو کاپی کروانے کے لیے سیکڑوں دینار خرچ کررہے ہیں، نقدی کی کمی کا شکار لیبیا کے لوگوں کے لیے یہ ایک بڑا خرچہ ہے۔

دوسری جانب لیبیا میں کئی اسٹیشنری اور دفتری سامان کی دکانوں نے موجودہ صورت حال سے فائدہ اٹھاتے ہوئے کتابوں کی زیادہ قیمت والی کاپیاں فروخت کی ہیں۔

واضح رہے کہ معمر قذافی کے دور سے لیبیا کے حکام ستمبر میں تعلیمی سال کے آغاز پر طالب علموں کو مفت نصابی کتب فراہم کرنے کے لیے بجٹ مختص کرتے ہیں تاہم ابھی بھی بہت سی کتابوں کی فراہمی باقی ہے جس کی وجہ سے طلبا صرف کتابوں کی فوٹو کاپیاں بنانے پر مجبور ہیں، جو ہر کلاس کو دی گئی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں