فرانسیسی حکومت نے مسلم اسپائیڈرمین کو شہریت دے دی Mamoudou Gassama
The news is by your side.

Advertisement

فرانسیسی حکومت نے مسلم اسپائیڈرمین کو شہریت دے دی

پیرس : فرانسیسی دارالحکومت نے چوتھی منزل سے لٹکے ہوئے کمسن بچے کی جان بچانے والے افریقی تارک وطن کو حکومت نے فرانس کی شہریت دے دی۔

تفصیلات کے مطابق چند ماہ قبل فرانسیسی حکومت نے دارالحکومت پیرس میں تارک وطن نوجوان کو بہادری کا مظاہرہ کرکے عمارت کی چوتھی منزل کی بالکونی سے لٹکنے والے کمسن بچے کی جان بچانے پر فرانس کی شہریت دے دی گئی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ غیر قانونی طور پر فرانس میں داخل ہونے والے مامودو قساما نامی افریقی شہری کو بہادری سے بچے کی جان بچانے پر عالمی سطح پر خراج تحسین پیش کیا گیا تھا۔

فرانس کے صدر ایمینیئول مکرون نے جاں فشانی کا مظاہرہ کرنے والے مسلم اسپائیڈرمین سے ذاتی طور پر صدارتی محل میں ملاقات کرکے شکریہ ادا اور فائر سروس میں خدمات انجام دینے کی پیش کش بھی کی تھی۔

فرانسیسی حکام کی جانب سے جمعرات کے روز مامودو قساما کو فرانس کی شہریت دیتے ہوئے کہا گیا تھا کہ عظیم الشان بہادری ہمارے عوام کو آپس میں متحد ہونے میں معاونت فراہم کرتی ہے، ایسی بہادری ہمت، ایثار اور انسان دوستی کی واضح مثال ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے مامودو قساما کو ابتدائی طور پر صرف فرانس کی شہریت دی گئی ہے جبکہ مالی سے تعلق رکھنے والا مسلم اسپائیڈر مین پیرس فائر سروس میں انٹرن شپ کے معاہدے پر دستخط کرچکا ہیں۔

فرانسیسی صدر نے چند روز قبل الیزے پیلس میں مامو دو قساما سے ملاقات کی تھی اور اسے بہادری کے امتیازی مظاہرے کے سبب ایک سرٹیفکیٹ اور سونے کا تمغہ پیش کیا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ مذکورہ شخص گذشتہ برس بحیرہ روم کے ذرئعے فرانس پہنچا تھا اور دارالحکومت میں کنسٹرکشن کمپنی میں ملازمت کی تلاش میں تھا۔

خیال رہے کہ عمارت کی چوتھی منزل کی بالکونی سے لٹکنے والے بچے کی جان بچانے کے بعد لوگوں کی جانب سے تارک وطن کو اس بہادری پر مسلم اسپائیڈر مین کا خطاب دیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں